دلچسپ و عجیب

کورونا وبا : تیرتے ہوئےسینما کی شروعات ہوگئی

امریکا میں ایسے کئی سینما کا آغاز ہورہا ہے جو عین ڈرائیو ان جیسے ہوں گے

عالمی کورونا وبا نےہماری زندگی کےمعمولات کو تیزی سےتبدیل کیا ہےاوراب امریکا میں ایسےکئی سینما کا آغازہورہا ہےجوعین ڈرائیوان جیسےہوں گےلیکن وہاں ایک خاندان کسی کارکی بجائےکشتی میں سوارہوکرفلم سےلطف اندوزہوسکےگا۔ انہیں تیرتےیا ’فلوٹنگ سینما‘ کا نام دیا گیا ہے۔ اس طرح کی فلم بینی کا خیال ایک کمپنی بیونڈ سینما کو آیا اوراگلےچند ماہ میں امریکہ کے کئی شہروں میں پانی کےکنارے سینما اسکرین لگائی جائیں گی اورلوگ کشتیوں میں بیٹھ کرفلم دیکھیں گے۔ اس طرح سماجی فاصلہ برقراررکھتےہوئےتفریح مہیا کی جائیں گی۔

ہم نےپاکستان میں ڈرائیوان یا کاروالےسینما دیکھےہیں لیکن اب اسٹریلیا کی ایک کمپنی سب سےپہلے 9 ستمبرکوہوسٹن میں ایسا سینما بنارہی ہےجس میں لوگ زمین کی بجائےپانی میں تیرتی کشتیوں میں بیٹھ کرفلم دیکھیں گے۔ ہوسٹن میں تجرباتی طورپرایک ہفتےتک فلم دکھائی جائے گی۔ تیراک سینما میں 12 سے 24 کشتیاں ہوں گی اورہرکشتی میں 8 افراد بیٹھ سکیں گے۔ گاہکوں کو فلم اورکشتی دونوں کا کرایہ بذریعہ ٹکٹ ادا کرنا ہوگا۔ پاپ کارن اوردیگرہلکی پھلکی اشیا مفت میں دی جائیں گی جبکہ ایک کشتی میں صرف دوستوں یا اہلِ خانہ کا گروپ ہی بیٹھ سکےگا۔ اگلےمرحلےمیں آسٹن شہرمیں دوسرا سینما 23 ستمبرکوکھولا جائےگا۔ فلم شائقین نئی اورکلاسیکی فلمیں دیکھ سکیں گے۔

Tags
Back to top button
Close