شوبز

” تتڑی دا جی گھبرائے”۔۔۔ فواد حسن کے گیت کی شاندار لانچنگ

نوجوان گلوکار فواد حسن کے صوفی گیت ” تتڑی دا جی گھبرائے” کی لانچنگ مقامی ہوٹل میں ہوئی جس میں شوبز انڈسٹری کی نامور شخصیات نے شرکت کی۔

اس گیت کی وڈیو کے ڈائریکٹر اور سینماٹوگرافر عادل عسکری ہیں جب کہ وڈیو میں شامل خان،خاور خان،ارم اختر اور فردوس جمال سمیت بہت سے فنکاروں نے کام کیا۔وڈیو میں دکھایا گیا کہ تقسیم ہندوستان کے بعد ہجرت کے وقت مسلمانوں کو کس قدر مشکلات کا سامنا کرنا،لاکھوں مسلمانوں نے اس ملک کے لئے کیسی کیسی قربانیاں دیں۔اس گیت کو "ایکسل پروڈکشن’ نے پروڈیوس کیا ہے۔وڈیو کی ایک اور خاص بات یہ ہے کہ اس میں ہجرت کے مناظر اور مسلمان قافلوں کی پاکستان آمد کو انتہائی خوبصورتی اور مہارت سے عکسبد کیا گیا اور حقیقی ماحول کی عکاسی کے خصوصی انتظامات کئے گئے جس کا سارا کریڈٹ بلاشبہ عادل عسکری اور ان کی ٹیم کا جاتا ہے۔ وڈیو کے ایسوسی ایٹ ڈائریکٹر اقبال عسکری ہیں۔

تقریب کے شرکا میں ڈائریکٹر حسن عسکری، اچھی خان ،بابر بٹ،جرار رضوی،دردانہ رحمٰن،ماہم رحمٰن،سوانا راجپوت،سوہا خان،جنید ملک، سوزین خان،خاور خان،چوہدری اعجاز کامران،شامل خان، ارم اختر،فانی جان،پونم ،منیر خان،الطاف باجوہ،اقبال عسکری اور یامین ملک نمایاں ہیں۔تقریب کی میزبانی راشد محمود اور شیزہ خان نے کی۔

تقریب میں وڈیو کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے شامل خان کا کہنا تھا کہ میں نے عادل عسکری کے ساتھ بہت کام کیا ہے ۔وہ اپنا کام بہت مہارت اور باریک بینی سے کرتا ہے۔اس گانے کی وڈیو میں ہجرت کے منظر دکھانا کوئی آسانا کام نہیں تھا لیکن عادل نے بہت محنت سے یہ کر دکھایا۔ارم اختر کا کہنا تھا کہ میری ہمیشہ سے کوشش تھی کہ اپنے ملک کے لئے کچھ ایسا کروں جو ہمیشہ یادگار رہے۔اس گیت کی وڈیو میں کام کرکے میری یہ خواہش بھی پوری ہوگئ۔نوجوان نسل اس وڈیو کے ذریعے دیکھ سکتی ہے کہ ہمارے بزرگوں نے اس ملک کے لئے کیسی کیسی قربانیاں دیں۔

گلوکار فواد حسن کے والد حسن جعفر زیدی نے کہا کہ میوزک فواد کی روح میں ہے،اسے چھٹی جماعت سے ہی گلوکاری کا شوق تھا،آج وہ جس مقام پر ہے اس کے پیچھے 20 سال کی جدوجہد ہے۔فواد حسن کی والدہ نے کہا کہ ہم نے کبھی اس کی حوصلہ شکنی نہیں کی۔آج ہم اس کی کامیابی پر بہت خوش ہیں۔

فواد حسن کا کہنا تھا کہ آج میرا وہ خواب پورا ہوگیا ہے جو میں نے برسوں پہلے دیکھا تھا۔وڈیو میں ہجرت کے مناظر شامل کرنے کا مقصد یہی تھا کہ آج کی نسل کو اپنے ماضی کی درخشاں روایات کی یاد دہانی کرائی جائے۔

ڈائریکٹر جرار رضوی نے کہا کہ عادل عسکری نے ڈائریکشن کے ساتھ وڈیو کی لائٹنگ بھی بہترین انداز کی ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button