صحت

چینی کو سفید زہر کیوں قرار دیا جاتا ہے؟ وجہ بتادی گئی

میٹھی غذاؤں کےاستعمال سےصحت پربےشمارمنفی اثرات مرتب ہوتےہیں جن میں دل کے امراض اور موٹاپے کا شکار ہوجانا سرفہرست ہے

چینی کو سفید زہر کیوں قرار دیا جاتا ہے؟ وجہ بتادی گئی، طبی و غذائی ماہرین کی جانب سے سفید چینی کو سفید زہر قرار دیا جاتا ہے جبکہ عمر ڈھلنے کے ساتھ اس کا استعمال کم اور ترک کر دینا تجویز کیا جاتا ہے، میٹھی غذاؤں کے استعمال سے صحت پر بے شمار منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں جن میں دل کے امراض اور موٹاپے کا شکار ہوجانا سرفہرست ہے۔

زندگی سے میٹھی غذائیں یعنی کے شکر یا چینی نکال دینے کا تصور کرنے ہی سے زندگی بے رنگ اور پھیکی لگنے لگتی ہے مگر اس کے صحت پر بے شمار طبی فوائد مرتب ہوتے ہیں جن میں جسم کا اپنی اصل ساخت میں آ جانا، شریانوں میں خون کی روانی برقرار رہنا، شوگر جیسی خاموش اور خطرناک بیماری سے بچاؤ، کم عمر نظر آنا، چہرے پر جھریوں کا عمل رُک جانا شامل ہے۔

چینی کا استعمال کم کرنے یا ختم کرنے کے نتیجے میں جسم پر آنے والے مثبت اثرات مندرجہ ذیل ہیں:

طبی ماہرین کے مطابق میٹھی غذاؤں سے مزاج پر خوشگوار اثرات مرتب ہوتے ہیں مگر اس کا استعمال اعتدال میں رہ کر کرنا چاہیے کیوں کہ چینی کا استعمال انسان میں ذہنی دباؤ کا سبب بھی بنتا ہے۔ ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہےکہ چینی کا استعمال کسی لت کی طرح ہوتا ہے، اس میں کمی لانا ممکن ہے مگر میٹھی غذاؤں کے عادی افراد کو اسے چھوڑنے کے لیے مشکل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

چینی کا استعمال ترک کرنے کی صورت میں جسمانی وزن میں کمی اور چربی کے پگھلنے کا عمل شروع ہو جاتا ہے۔ چینی کا استعمال چھوڑ دینے سے موسمی بیماریوں کا خطرہ کم ہوجاتا ہے کیوں کہ چینی ہی جسم کے حصوں میں شدید ورم، سوجن اور سوزش کا باعث بنتی ہے، چینی کا استعمال ترک کر دینے سے نزلہ، زکام یا بخار وغیرہ کا خطرہ بھی کم ہوتا ہے جبکہ الرجی اور دمہ کی علامات سے بچاؤ ممکن ہوتا ہے۔

طبی ماہرین کے مطابق میٹھا کھانا ذیابیطس کا خطرہ بھی بڑھاتا ہے، ذیابیطس سے تحفظ کے لیے 25 سال کی عمر کے بعد ہی سے میٹھی غذاؤں کا استعمال کم کر دینا چاہیے۔ میٹھی غذائیں کھانے کے بعد خون میں گلوکوز کی سطح بڑھتی ہے جس کی وجہ سے انسولین کی سطح بھی بڑھ جاتی ہے، ایسا ہونے پر اعصابی نظام کا وہ حصہ متحرک ہوتا ہے جو بلڈ پریشر اور دل کی دھڑکن بڑھاتا ہے، ہائی بلڈ پریشر امراض قلب کی بنیادی وجہ ہے۔

چینی دانتوں میں کیوٹیز کا خطرہ بڑھاتی ہے جبکہ منہ میں ایسے بیکٹریاز کی تعداد بھی بڑھاتی ہے جو دانتوں کے کمزور ہونے کا باعث بنتے ہیں۔ ماہرین کے مطابق رات میں کھائی جانے والی میٹھی غذائیں پر سکون نیند میں خلل کا سبب بنتی ہیں، سونے سے پہلے کچھ میٹھا کھانے سے کچھ دیر بعد بلڈ شوگر لیول نیچے گرتا ہے جبکہ وافر پسینہ آنے کی شکایت بھی ہوسکتی ہے۔

غذائی و طبی ماہرین کے مطابق میٹھی غذائیں تناؤ کا باعث بننے والے ہارمونز کو زیادہ متحرک کر دیتے ہیں جس سے سونے میں مشکل کا سامنا ہوتا ہے، میٹھا چھوڑ دینے کی صورت میں 3 سے 4 دن میں نیند کا معیار بہتر ہوجاتا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.