صحت

گاجرکا جوس بھی خطرناک مگرکن کے لئے؟جانئے

گاجر کا استعمال جہاں صحت کے لیے نہایت مفید قراردیا جاتا ہے وہیں اس کا استعمال ہرکسی کےلیےفائدہ مند ثابت نہیں ہوتا

گاجرکا جوس بھی خطرناک مگرکن کے لئے؟جانئے، موسم سرما کی سبزی گاجر کا استعمال جہاں صحت کے لیے نہایت مفید قراردیا جاتا ہے وہیں اس کا استعمال ہرکسی کےلیےفائدہ مند ثابت نہیں ہوتا ۔ غذائی ماہرین کی جانب سےگاجرمیں بےشماروٹامنز،منرلز،غذائی فائبراور اینٹی آکسیڈنٹ خوبیاں پائے جانے کےسبب اس کا استعمال لازمی قراردیا جاتا ہےاوراس کی بےشمارخصوصیات بھی گنوائی جاتی ہیں مگردوسری جانب ماہرین کےمطابق ہی گاجرکا استعمال ہرانسانی جسم میں ایک جیسے فوائد نہیں دیتا۔

غذائی ماہرین کے مطابق اس موسمی سبزی کا استعمال بچوں، بوڑھوں اورجوانوں سمیت سب ہی کرسکتےہیں مگرایسےافراد جنہیں شوگریا پھرموٹاپے کی شکایت ہوایسےافراد کے لیے گاجریا اس کےجوس کا استعمال سختی سےمنع کیا جاتا ہے۔ غذائی ماہرین کے مطابق گاجر میں موجود اینٹی آکسیڈنٹ خوبیاں جہاں انسانی جسم میں متاثر خلیوں کی مرمت کا کام کر تی ہیں وہیں یہ شوگر اور موٹاپے کے شکار افراد کے لیے صحت سے متعلق صورتحال میں بگاڑ کا سبب بھی بن سکتی ہیں۔

طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ گاجر میں موجود وٹامن بی، اے اور ای سمیت کئی قدرتی اور مفید غذائی اجزاء پائے جاتے ہیں جو انسانی صحت کے لیے انتہائی اہم ہیں مگر اس میں قدرتی شکر اور کیلوریز کی مقدار شوگر اور موٹاپے کے شکار افراد کے لیے نقصان دہ ثابت ثابت ہو سکتی ہے۔

طبی و غذائی ماہرین کا کہنا ہے کہ ایسے افراد جنہیں اضافی وزن، شوگر، کمزور معدے اور آنتوں کی شکایت ہو ایسے افراد کو ناصرف گاجر کھانے سے پرہیز بلکہ اس کا جوس بھی نہیں پینا چاہیے، گاجر کا باقاعدہ استعمال فربہ افراد کو مزید موٹا اور شوگر کے مریضوں کے لیے خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.