صحت

وٹامن ڈی کی کمی کون کون سے امراض جنم دیتی ہے؟

ایک تحقیق میں وٹامن ڈی کی کمی کے حوالے سے کئی اہم انکشافات سامنے آئیں ہیں۔

یہ بات تو سب ہی جانتے ہیں کہ وٹامن ڈی حاصل کرنے کا سب آسان سستا ذریعہ سورج کی روشنی ہے۔ ایک عرصے تک وٹامن ڈی کو ہڈیوں کی مضبوطی اور ان کی صحت کے لئے ضروری سمجھاجاتا تھا لیکن حالیہ تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ اس کی کمی ہڈیوں کے ساتھ دل کے افعال کو بھی بری طرح متاثر کرتی ہے۔آسٹریلیا میں ہونے والی ایک تحقیق میں دل کی شریانوں کے امراض اور وٹامن ڈی کی کمی کے درمیان تعلق کو بغور جانچا گیا اور جنیاتی شواہد کو دیکھتے ہوئے اب یہ کہا جارہا ہے کہ اس اہم وٹامن کی کمی دل کے امراض کا سبب بن سکتی ہے۔تحقیق کے مطابق وٹامن ڈی کی کمی کسی بھی فرد میں امرض قلب اورہائی بلڈ پریشر کا خطرہ کئی گنا بڑھا سکتی ہے۔واضح رہے کہ دنیا بھر میں اموات کی سب سے بڑی وجہ دل کی شریانوں سے جڑے امراض ہیں۔

تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ وٹامن ڈی کی کمی دل کی مجموعی صحت پر منفی اثر ڈالتی ہیں اگر اس پر توجہ دی جائے تو اور اس کی کمی کو پورا کرنے کے لئے اقدامات کئے جائیں تو دل کے بڑھتے ہوئے امراض کی روک تھام کی جاسکتی ہے اور یوں امرض قلب کے عالمی بوجھ کو کم کیا جاسکتا ہے۔تاہم محققین کا کہنا ہے کہ وٹامن ڈی کی بہت زیادہ کمی کے شکار افراد کا تناسب کافی کم ہے مگر جنہیں اس وٹامن کی معتدل کمی ہے انہیں بھی دل کے امرض سے بچانا نہایت ضروری ہے یہاں پر ان افراد کا ذکر کیا جارہا ہے جو گھر کی چار دیواری میں رہتے ہیں اور سورج کی روشنی میں اپنا وقت نہیں گزارتے۔وٹامن ڈی کو سورج کی روشنی کے علاوہ سیلمن فش، انڈے کی زردی، بیف لیور، دودھ، سویا ملک، دہی، اورنج جوس، فورٹیفائڈ غذاؤں اور سیریل سے حاصل کیا جاسکتا ہے۔

اگر ان غذاؤں سے وٹامن ڈی کی کمی پوری نہیں ہورہی ہو تو اپنے معالج کے مشورے سے وٹامن کی ڈی کی سپلیمینٹ بھی استعمال کی  کاجاسکتی ہے اس طرح کم مدت میں اس وٹامن کی کمی کو پورا کیا جاسکتا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.