انٹرنیشنلفیچرڈ پوسٹ

ٹرمپ کا غیر ملکیوں کے متعلق افسوسناک اعلان

امریکا میں سب سے زیادہ غیر دستاویزی تارکین وطن میکسیکو سے داخل ہوتے ہیں اور سیاسی پناہ کی درخواست دیتے ہیں

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکا میں بغیر دستاویز سرحد پار کرکے داخل ہونے والے تارکین وطن کو ملک سے نکالنے کے احکامات میں غیر معینہ مدت کے لیے توسیع کر دی ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق ٹرمپ انتظامیہ نے بظاہر یہ اقدام کورونا کی وبا اور امریکا کے پبلک ہیلتھ سسٹم میں پائے جانے والے خدشات کے پیش نظر کیا ہے۔ اس حوالے سے امریکا کے سینٹرز فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پریونشن سی ڈی سی کے ڈائریکٹرروبرٹ ریڈ فیلڈ نے سابقہ احکامات کی تجدید کی۔ ان احکامات کے تحت بارڈر گارڈز کو یہ اختیارات حاصل تھے کہ وہ غیر دستاویزی تارکین وطن کو ان کے آبائی ملک یا جس ملک سے وہ امریکا میں داخل ہوئے وہاں واپس بھیج دیں۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بظاہر امریکا کے غیردستاویزی تارکین وطن یا سیاسی پناہ کے متلاشی افراد کے کیسز کی چھان بین کے نظام کو مزید سخت اور پیچیدہ بنانے کی بھی کوشش کی ہے۔ امریکا میں سب سے زیادہ غیر دستاویزی تارکین وطن میکسیکو سے داخل ہوتے ہیں اور سیاسی پناہ کی درخواست دیتے ہیں۔ جس کے بعد ان کے کیس کی قانونی جانچ پڑتال میں ایک سال لگ جاتا ہے۔

سی ڈی سی کا کہنا ہے کہ بارڈر کنٹرول کے احکامات میں غیر معینہ مدت کے لیے توسیع کی ایک بڑی وجہ یہ ہے کہ صحت عامہ کے حکام میں غیردستاویزی تارکین وطن کی نگرانی مشکل ہے اور وہ کورونا وائرس کی روک تھام یقینی نہیں بنا پائیں گے۔ انتظامیہ کو ڈر ہے کہ غیردستاویزی تارکین وطن یا سیاسی پناہ کے متلاشی افراد صحت عامہ کے ادارے بھی اس صورتحال سے نہیں نمعاشرتی فاصلہ برقرار رکھنے، خود کو الگ تھلگ رکھنے یا قرنطینہ سے متعلق ہدایات پر عمل نہیں کرپائیں گے۔

Tags
Back to top button
Close