انٹرنیشنل

توہین عدالت کا جرم ثابت ہونے پر بھارتی سپریم کورٹ نے منفرد سزا سنا دی

اگر پرشانت بھوشن 15 ستمبر تک جرمانہ ادا کرنے میں ناکام رہے تو انہیں تین ماہ قید کی سزا بھگتنا پڑے گی

بھارتی سپریم کورٹ نے توہین عدالت کا جرم ثابت ہونے پر ملک کے نامور قانون دان کو منفرد سزا سناتے ہوئے ایک روپے جرمانے کی سزا سنا دی۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق بھارت کی اعلیٰ ترین عدالت نے سماجی رہنما اور قانون دان پرشانت بھوشن کی دو ٹوئٹس کے خلاف ایکشن لیا اور انہیں توہین آمیز قرار دیا۔ سپریم کورٹ کی جانب سے پرشانت بھوشن سے غیر مشروط معافی کا مطالبہ کیا گیا جسے انہوں نے مسترد کر دیا۔

پرشانت بھوشن کا کہنا تھا کہ آزادی اظہار رائے عدلیہ کے ممبران پر بھی تنقید کی اجازت دیتی ہے۔ سماجی رہنماء کی جانب سے غیر مشروط معافی نہ مانگنے پر عدالت نے انہیں ایک روپے جرمانے کی سزا سنائی۔ سپریم کورٹ نے اپنے حکم نامے میں کہا کہ اگر پرشانت بھوشن 15 ستمبر تک جرمانہ ادا کرنے میں ناکام رہے تو انہیں تین ماہ قید کی سزا بھگتنا پڑے گی۔

Back to top button