انٹرنیشنل

امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کوگھربھیجنےکی تیاری مکمل

گزشتہ چوبیس گھنٹوں کےدوران صدرٹرمپ کی صحت کےحوالے سےاہم علامات تشویش ناک تھیں

کورونا وائرس میں مبتلاامریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کےمعالج کاکہناہےکہ گزشتہ روزصدرٹرمپ کاآکسیجن لیول گرگیا تھا اورانہیں سانس میں دشواری ہوئی تاہم اب ان کی صحت میں بہت بہتری آرہی ہے جس کےبعد انہیں اسپتال سےپیرتک چھٹی دی جاسکتی ہے۔  ایکسپریس نیوز کے مطابق اس سےپہلےوائٹ ہاؤس کے چیف آف اسٹاف نےصدرٹرمپ کی صحت سےمتعلق تشویش کا اظہارکیاتھا۔وائٹ ہاؤس کے چیف آف اسٹاف نےصدرٹرمپ کی صحت سےمتعلق تشویش کا اظہارکیااورکہا کہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کےدوران صدر ٹرمپ کی صحت کےحوالے سےاہم علامات تشویش ناک تھیں اور آئندہ اڑتالیس گھنٹے ان کی صحت کے حوالے سےاہم ہیں۔

وائٹ ہاؤں کےمعالج شین کونلی نےاتوارکوصحافیوں کوصدرٹرمپ کی صحت کےبارے میں تفصیلات بتاتےہوئےکہا کہ کسی بھی بیماری میں اتار چڑھاؤآتا رہتا ہے۔ صدرکےخون میں آکسیجن کی مقداردومرتبہ مطلوبہ سطح سےنیچےآچکی ہےتاہم انھیں علاج معالجہ فراہم کیا جارہا ہے۔  صدرکےمعالجین کے مطابق انہیں پیرتک اسپتال سےچھٹی دی جاسکتی ہے۔ دوسری طرف والٹرریڈنیشنل ملٹری میڈیکل سینٹرمیں امریکی صدرکا علاج جاری ہے ۔صدرڈونلڈ ٹرمپ نےٹویٹرپراپنےویڈیوپیغام میں کہا،کہ وہ اورخاتون اول بہادری سے کورونا کا مقابلہ کر رہے ہیں۔انہوں نےنیک خواہشات کےپیغامات بھجوانے پرامریکی شہریوں اورعالمی رہنماوں کا شکریہ ادا کیا۔

ایک اورٹویٹ میں صدرٹرمپ نےکہاکہ وہ اسپتال کےباہران کی حمایت میں جمع ہونےوالےشہریوں کےمشکور ہیں۔اس سےپہلےامریکی صدرکےمعالج نےکہاتھاصدرٹرمپ میں کوروناکی تصدیق کےبعدسےصحت میں بہتری  آرہی ہے۔وائٹ ہاوس کی جانب سےامریکی صدرکی تصاویربھی جاری کی گئیں،جن میں وہ اسپتال میں صدارتی ذمےداریاں ادا کرتے نظر آئے۔ واضح رہے کہ دوروز  قبل امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹراپنے اورخاتون اول میلانیا ٹرمپ کے کورونا وائرس میں مبتلا ہونے کی تصدیق کی تھی۔ وائرس کی تشخیص کے بعد صدر ٹرمپ کو معائنے اور علاج معالجے کے لیے اسپتال منتقل کیا گیا تھا۔

Back to top button