انٹرنیشنل

ڈونلڈ ٹرمپ کےخلاف تحقیقات،ایوانکا ٹرمپ میدان میں کود پڑیں

ٹرمپ کی صاحبزادی ایوانکا ٹرمپ نےوالد اوراپنےخلاف ہونےوالی تحقیقات کوسیاسی قراردیدیا

امریکی صدارتی انتخابات میں شکست کا سامنا کرنے والےامریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کی صاحبزادی ایوانکا ٹرمپ نے والد اوراپنے خلاف ہونے والی تحقیقات کوسیاسی قراردیتےہوئے کہا ہے کہ انہیں ‘ہراساں’ کیا جا رہا ہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ کی دوسری مدت میں شکست کے چند دن بعد ہی نیویارک ٹائمز، نیویارکر، وینٹی فیئراورپولیٹیکو سمیت متعدد نشریاتی اداروں نے اپنی رپورٹس میں بتایا تھا کہ عہدہ صدارت ختم ہونے کے بعد ممکنہ طورپرڈونلڈ ٹرمپ کومتعدد قانونی کیسزکا سامنا کرنا پڑے گا۔

مختلف نشریاتی اداروں نے ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف گزشتہ 4 سال میں لگائے جانے والے الزامات اوران کے خلاف کی جانے والی ابتدائی تحقیقات پر تجزیہ کرتے ہوئے بتایا تھا کہ جیسے ہی ٹرمپ عہدہ صدارت سے ہٹیں گے، انہیں حاصل استثنیٰ بھی ختم ہوجائے گا، جس کے بعد ممکنہ طور پر وہ متعدد کرمنل اور سول کیسز کا سامنا کریں گے۔ رپورٹس میں بتایا تھا کہ اگر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف فوجداری مقدمات میں جرائم ثابت ہوگئے تو انہیں جیل کی ہوا بھی کھانی پڑ سکتی ہے۔

رپورٹس میں بتایا گیا تھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ پر گزشتہ چار سال کے دوران متعدد کرپشن، ٹیکس چوری، مارکیٹنگ اور بزنس فرانڈ سمیت خواتین کے جنسی استحصال کے الزامات لگائے گئے، جن پر انہیں قانونی کارروائی کا سامنا بھی ہوسکتا ہے۔ اور اب خبر سامنے آئی ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف نیویارک کے پراسیکیوٹرز نے پہلے سے جاری 2 تحقیقات میں تیزی کردی۔

نیویارک پراسیکیوٹرز کی جانب سے پہلے سے ہی جاری تفتیشوں میں تیزی کی نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کو ٹوئٹ کرتے ہوئے ڈونلڈ ٹرمپ کی صاحبزادی نے والد کے خلاف تحقیقات کو مکمل طور پر سیاسی قرار دیا۔ ایوانکا ٹرمپ نے نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کو شیئر کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ دونوں تحقیقات 100 ڈیموکریٹکس کی جانب سے کروائی جا رہی ہیں اور ان تحقیقات کے ذریعے ان کے خاندان کو ‘ہراساں’ کیا جا رہا ہے۔ ایوانکا ٹرمپ نے واضح کیا کہ مذکورہ تفتیش کروانے والے اچھی طرح جانتے ہیں کہ جن الزامات کی بنا پر تحقیقات کی جا رہی ہیں، ان میں کوئی سچائی نہیں ہے، ہم نے کسی طرح کا کوئی ٹیکس فائدہ نہیں اٹھایا۔

 

Back to top button