انٹرنیشنل

مودی کے منہ پر طمانچہ، سکھوں نے بھی بھارت کی اہم ترین عمارت پر قبضہ کر کے وہاں پر خالصتاً کا جھنڈا لہرا دیا‘ بھارت میں بھونچال برپا ہوگیا

کسانوں نے دہلی کا لال قلعہ فتح کر کے اپنا پرچم لہرا دیا ہے جس سے بھارتی جمہو ری دار الحکومت نئی دہلی میدان جنگ بنا ہوا ہے

مودی کے منہ پر طمانچہ، سکھوں نے بھی بھارت کی اہم ترین عمارت پر قبضہ کر کے وہاں پر خالصتاً کا جھنڈا لہرا دیا‘ بھارت میں بھونچال برپا ہوگیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق لاکھوں بھارتی کسان مودی سرکار کی جانب سے دارالحکومت میں ان کے داخلے کو روکنے کے لیے تمام رکاوٹوں کو توڑتے ہوئے ٹریکٹروں ٹرالیوں سمیت دارالحکومت نئی دہلی میں داخل ہو گئے۔ کسانوں نے دہلی کا لال قلعہ فتح کر کے اپنا پرچم لہرا دیا ہے۔ بھارتی جمہو ری دار الحکومت نئی دہلی میدان جنگ بنا ہوا ہے۔اپنے حقوق کی خاطر کسان تمام رکاوٹیں ہٹا کر شہر میں داخل ہو گئے ہیں۔پولیس اور مظاہرین میں جھڑپیں جاری ہیں۔ٹریکٹروں اور گھوڑوں پر سوار کسانوں کو مودی سرکار روک نہیں پائی۔پولیس کی جانب سے کسانوں کو روکنے کے لیے آنسو گیس کے شیل فائر کیے گئے۔کچھ نوجوان مظاہرین نے گھوڑوں پر سوار ہو کر اعلان جنگ کیا اور کچھ کسانوں نے پولیس کی کرین پر قبضہ کیا۔

کسانوں کو دارالحکومت میں داخلے سے روکنے کے لیے پولیس کی جانب سے آنسو گیس کے شیل فائر کیے گئے ہیں. بھارتی ذرائع ابلاغ میں اس موضوع کو لے کر بحث شروع ہوگئی ہے کہ آج بھارت کے 72ویں یوم جمہوریہ کی پریڈ ہوپائے گی یا نہیں؟کیونکہ کسانوں نے اعلان کررکھا ہے فوجی پریڈ کے بعد وہ اسی مقام پر اپنے ٹریکٹروں اور ٹرالیوں کے ساتھ پریڈکریں گے اسی لیے اس ریلی کو ٹریکٹر پریڈ کا نام دیا گیا ہے. پنجاب ہریانہ، مغربی اتر پردیش، راجستھان اور کئی دیگر ریاستوں سے ہزاروں کسان اپنے ٹریکٹر لے کر دلی کے نواح میں پہنچ چکے ہیں اور اب وہ مختلف اطراف سے دارالحکومت میں داخل ہورہے ہیں دارالحکومت کی سرحدوں پر اس وقت موجود ٹریکٹروں کی تعداد ہزاروں میں بتائی جا رہی ہے کسان اس ریلی کو کسانوں کی طاقت کا مظاہرہ قرار دے رہے ہیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button