انٹرنیشنلفیچرڈ پوسٹ

میانمارفوج کے خلاف احتجاج خونی جنگ میں تبدیل

میانمارفوج کے خلاف احتجاج خونی جنگ میں تبدیل،مظاہرین کےجسم کےکس حصےپرگولیاں ماری جائیں گی؟ سنسنی خیز خبر سامنے آگئی

میانمارفوج کےخلاف احتجاج خونی جنگ میں تبدیل،مظاہرین کےجسم کےکس حصےپرگولیاں ماری جائیں گی؟ سنسنی خیزخبرسامنےآگئی،میڈیا رپورٹ کےمطابق میانمارکےفوجی سربراہ نےملک میں نئےانتخابات کرانےکا وعدہ کیا ہےلیکن گڑبڑ پھیلانےوالےمظاہرین کو ’سرمیں گولی ماردینے‘ کی وارننگ دی ہے۔ میانمارکی فوج، ٹاٹماڈاو،نےیوم مسلح افواج منایا۔ اس موقع پرفوجی سربراہ نےاپوزیشن کی مذمت کی اورنئے انتخابات کرانے کا وعدہ کیا۔ دوسری طرف ملک بھرمیں مظاہروں کےدوران ہلاکتوں کا سلسلہ بھی جاری ہے۔  دارالحکومت میں فوجی پریڈ کے بعد قومی ٹیلی ویزن پر نشر اپنی تقریر میں جنرل من آنگ ہلینگ نے کہا”فوج ملک میں جمہوریت کی حفاظت کے لیے پوری قوم سے متحد ہونے کی اپیل کرتی ہے۔“

یہ پریڈ ٹاٹماڈاو کی فوجی طاقت کی نمائش تھی۔ اس میں فوجی گاڑیوں اورجنگی ہتھیاروں کےساتھ فوجیوں نےمارچ کیا۔ روس کےنائب وزیر دفاع الیکزینڈرفومن بھی اس تقریب میں موجود تھے۔ انہوں نےجمعےکےروزٹاٹماڈاوکےسینئررہنماؤں سےملاقات کےدوران اپنی حمایت کی پیش کش کی تھی۔ اس موقع پرمن آنگ ہلینگ کا کہنا تھا، ”روس ہمارا حقیقی دوست ہے۔“ میانمارمیں یوم مسلح افواج پریڈ کےموقع پربالعموم مختلف ملکوں کےمہمان موجود ہوتےہیں تاہم اس مرتبہ کسی دوسرے ملک کا کوئی عہدیدارنظرنہیں آیا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button