انٹرنیشنلفیچرڈ پوسٹ

بنگلہ دیش نے بھارتی حکومت سے ناراضگی مول لے لی اور اب کون سے ملک کی طرف دوستی کا ہاتھ بڑھا دیا، حیران کن خبر آگئی

حال ہی میں چین نے بنگلہ دیش کو امریکہ کی سربراہی میں تشکیل دیے جانے والے کواڈ اتحاد میں شمولیت سے خبردار کیا ہے

بنگلہ دیش نے بھارتی حکومت سے ناراضگی مول لے لی اور اب کون سے ملک کی طرف دوستی کا ہاتھ بڑھا دیا، حیران کن خبر آگئی ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق حال ہی میں چین نے بنگلہ دیش کو امریکہ کی سربراہی میں تشکیل دیے جانے والے کواڈ اتحاد میں شمولیت سے خبردار کیا ہے۔ چین کی طرف سے یہ تنبیہہ چین کے سفیر لی جیمنگ نے صحافیوں کے ساتھ ایک ملاقات میں دی جو بظاہر بڑی جارحانہ اور چین کی طرف سے پیش بندی معلوم ہوتی ہے۔ لیکن اس پر انڈیا میں غصے کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ چین کی طرف سے یہ تنبیہہ کوئی غیر متوقع چیز بھی نہیں کیونکہ چین اس خطے میں امریکی اقدامات پر بڑی گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔ امریکہ خطے کے ملکوں سے اپنے تعلقات مضبوط کر رہا ہے اور کواڈ اس سلسلے کی ہی ایک کڑی ہے۔ چین سفارتی سطح پر اور ذرائع ابلاغ کے اداروں کے ذریعے خطے میں امریکی سرگرمیوں پر اپنی تشویش کا اظہار کرتا رہا ہے۔ چین کے سرکاری ادارے گلوبل ٹائمز نے لی جیمنگ کے حوالے سے لکھا ہے کہ امریکہ چین اور بنگلہ دیش کے درمیان غلط فہمیاں پیدا کرنے کی کوششیں کر رہا ہے۔

دریں اثنا بنگلہ دیش کے وزیر خارجہ اے کے عبدالمومن نے فوری طور پر چینی سفیر کے بیان پر اپنا رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ یہ بیان افسوس ناک ہے۔ انھوں نے کہا کہ بنگلہ دیش اپنی خارجہ پالیسی کا خود تعین کرتا ہے اور کسی بھی دوسرے ملک کی اپنی سوچ اور اپنا مقف ہو سکتا ہے۔ چین کے سفیر کی طرف سے 10 مئی کو یہ بیان دیا گیا تھا کہ اگر بنگلہ دیش کی حکومت نے کواڈ میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا تو ڈھاکہ اور بیجنگ کے تعلقات شدید طور پر متاثر ہو سکتے ہیں۔ بنگلہ دیش کی حکومت اور ملکی ذرائع ابلاغ کے لیے چینی سفیر کا یہ بیان باعث حیرت تھا۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق لگتا ہے کہ چین کی حکومت اس امکان پر پریشانی کا شکار ہے کہ کہیں بنگلہ دیش اس اتحاد کا حصہ نہ بن جائے۔ اس پریشانی کی کیا وجہ ہے ہمیں نہیں معلوم، جو کچھ بھی ہو لیکن اس میں کوئی شک نہیں ہونا چاہیے کہ اس بارے میں فیصلہ کرنے کا اختیار بنگلہ دیش کی حکومت کا ہے۔’ گو کہ چین نے پہلے کبھی بنگلہ دیش کو کواڈ سے دور رہنے کے بارے میں براہ راست کچھ نہیں کہا لیکن اس بارے میں کافی عرصے سے تشویش پائی جاتی ہے۔

لی جیمنگ نے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ امریکہ مسلسل اپنے خفیہ عزائم کے تحت چاہ رہا ہے کہ بنگلہ دیش کو بھی اس چین کے مخالف اتحاد کا حصہ بنایا جائے۔ اس سلسلے میں انھوں نے اس وقت کے امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر کی بنگلہ دیش کی وزیر اعظم حسینہ واجد سے فون پر ہونے والی گفتگو کا حوالہ دیا اور امریکہ کے نائب وزیر خارجہ سٹیفن بیگن کے بنگلہ دیش دورے کی بھی نشاندہی کی۔ چینی سفیر نے کہا کہ ‘کووڈ 19 کی وبا، چین اور امریکہ کے درمیان شدید کشیدگی اور چین اور انڈیا کے درمیان سرحدی تنازعے نے بنگلہ دیش کے لیے بیرونی ماحول کو بھی تبدیل کر دیا ہے۔’

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.