انٹرنیشنلفیچرڈ پوسٹ

دنیا بھر میں بھوک سے ہر ایک منٹ میں کتنے افراد موت کے منہ میں جا رہے ہیں؟ انٹرنیشنل تنظیم اوکسفیم نے تحقیقاتی رپورٹ جاری کر کے سنسنی پھیلا دی

غربت کے خاتمہ کیلئے کام کرنیوالی تنظیم اوکسفیم نے انکشاف کیا کہ دنیا بھر میں بھوک سے ہر ایک منٹ میں 11 افراد لقمہ اجل بن جاتے ہیں

دنیا بھر میں بھوک سے ہر ایک منٹ میں کتنے افراد موت کے منہ میں جا رہے ہیں؟ انٹرنیشنل تنظیم اوکسفیم نے تحقیقاتی رپورٹ جاری کر کے سنسنی پھیلا دی ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق آکسفیم امریکا کے صدر اور چیف ایگزیکٹو آفیسر آبی میکس مین نے کہا کہ قحط سالی کورونا وبا سے زیادہ ہلاکت خیز ہے۔ غذائی قلت سے ہلاک ہونے والے ہر ایک شخص کو ناقابل بیان مصائب سے گزرنا پڑتا ہے۔ تحقیقی رپورٹ دی ہنگر وائرس ملٹی پلائیز میں اس جانب بھی توجہ دلائی گئی ہے کہ غذائی قلت کے شکار ممالک میں سے دوتہائی کو قحط سالی کا سامنا ملک میں موجود فوجی تنازعوں یا اقتدار کی کشمکش کی وجہ سے کرنا پڑا ہے جن میں ایتھوپیا، مڈغاسکر، جنوبی سوڈان اور یمن شامل ہیں۔

واضح رہے کہ آکسفیم نے اپنی سالانہ رپورٹ میں بتایا ہے کہ دنیا بھر میں 15 کروڑ 50 لاکھ افراد غذائی عدم تحفظ کی بحران کی سطح پر زندگی بسر کر رہے ہیں جو پچھلے سال کے مقابلے میں 20 ملین زیادہ ہے۔ غربت کے خلاف سرگرم عمل تنظیم آکسفیم نے اپنی رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ ہر منٹ میں بھوک کی وجہ سے 11 افراد ہلاک ہوجاتے ہیں جب کہ عالمی سطح پر قحط جیسے حالات کا سامنا کرنے والوں کی تعداد میں گزشتہ برس کے مقابلے میں 6 گنا اضافہ ہوا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.