انٹرنیشنلفیچرڈ پوسٹ

چاردہائیوں سے نہ سونے کے باوجود بھی نا کوئی تھکن اور نا ہی نیند کی کمی محسوس کرنے والی خاتون منظرعام پر آگئی، پوری دنیا میں سنسنی پھیلا دینے والی خبر

خاتون کے دعویٰ کی تصدیق ان کیشوہر اور پڑوسیوں کی جانب سے بھی کی گئی جنہوں نے انھیں آزمانا چاہا لیکن وہ خود سوگئے جبکہ ژینگ جاگتی رہیں

چاردہائیوں سے نہ سونے کے باوجود بھی نا کوئی تھکن اور نا ہی نیند کی کمی محسوس کرنے والی خاتون منظرعام پر آگئی، پوری دنیا میں سنسنی پھیلا دینے والی خبر آگئی ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا پر ایک عجیب وغریب کیس رپورٹ کیا گیا ہے جس میں خاتون کا دعویٰ ہے کہ وہ 4دہائیوں سے نہیں سوئیں لیکن اس کے باوجود تھکن یا نیند کی کمی محسوس نہیں کرتیں۔ رپورٹ کے مطابق چین کے وسطی صوبے ہینان سے تعلق رکھنے والی خاتون کا لی ژینگ نے دعوی کیا کہ انھیں یاد ہے کہ وہ آخری بار 5 یا 6 سال کی عمر میں سوئی تھیں۔

رپورٹ کے مطابق خاتون کے دعوے کی تصدیق ان کیشوہر اور پڑوسیوں کی جانب سے بھی کی گئی ہے جنہوں نے انھیں آزمانا چاہا لیکن وہ خود سوگئے جبکہ ژینگ جاگتی رہیں۔ لی ژینگ نیند نہ آنے کی غیر معمولی کیفیت کے باعث اپنے گاں زوہنگ مو میں ایک سلیبرٹی بن گئی ہیں، لی کے شوہر لی سوکوئن کا کہنا ہے کہ ا ن کی اہلیہ کو نیند کی ضرورت نہیں ہے، شادی کے بعد انھوں نے دیکھا کہ اہلیہ رات کو سونے کے بجائے بھی گھر کا کام کرتی ہیں بعد ازاں ڈاکٹرز سے بھی کئی بار چیک اپ کروایا لیکن انھیں بیوی کی صحت میں کوئی مشکوک چیز نہیں ملی۔

تاہم حال ہی میں لی ژینگ کی دہائیوں سے کھوئی نیند کا معمہ اس وقت حل ہوگیا جب چین کے طبی معالج کی ایک ٹیم نے 48 گھنٹے خاتون کی نگرانی کے لیے ایک سینسر کا استعمال کیااور ڈاکٹرز نے دریافت کیا کہ لی حقیقت میں سوتی ہیں لیکن اس طرح نہیں جیسا کہ عام طور پر لوگ سوتے ہیں۔ نگرانی کے دوران ڈاکٹرز نے دریافت کیا کہ لی نے اس دوران بغیر آنکھ بند کیے اور بستر پر لیٹے بغیر شوہر سے بات چیت کے دوران نیند لی۔ ماہرین کے مطابق، لی کی اس کیفیت کو sleep when awake کہا جاتا ہے جو کہ ایک ایسی کیفیت ہے جس میں انسان سو رہا ہوتا ہے لیکن اس کے اعضا اور اعصاب دونوں متحرک ہوتے ہیں یعنی وہ بات کرسکتا ہے، چل سکتا ہے وغیرہ وغیرہ۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.