انٹرنیشنلفیچرڈ پوسٹ

آن لائن فراڈ کی گونج پوری دنیا میں سنائی دینے لگی، ڈیٹنگ سائٹ پر ایک اور لڑکی لٹ گئی، فراڈیئے نے کتنے لاکھ پاؤنڈ کا چونا لگایا؟ حیران کر دینے والی حقیقت سامنے آگئی

وہ رومانس فراڈ یعنی محبت بھرے فریب کا شکار ہوئی ہیں اور چاہتی ہیں کہ آن لائن ڈیٹنگ ایپس اس کی روک تھام کے لیے مزید اقدامات اٹھائیں

آن لائن فراڈ کی گونج پوری دنیا میں سنائی دینے لگی، ڈیٹنگ سائٹ پر ایک اور لڑکی لٹ گئی، فراڈیئے نے کتنے لاکھ پاؤنڈ کا چونا لگایا؟ حیران کر دینے والی حقیقت سامنے آگئی ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مئی 2019 میں صوفیہ نے ایک ڈیٹنگ سائٹ پر ایرن نامی شخص سے بات کرنا شروع کی۔ صوفیہ کی خواہش تھی کہ انھیں کوئی اچھا مرد ملے تو وہ شادی کر کے اپنا گھر بسائیں۔ ایرن نے انھیں بتایا کہ ان کے ارادے بھی کچھ ایسے ہی ہیں اور یہ کہ وہ بھی اپنا گھر بسانے کے خواہشمند ہیں۔ دونوں کے خیالات میں بظاہر اسی یکسانیت کے باعث آن لائن ان کی بات چیت کا دورانیہ بڑھتا چلا گیا اور ان کے درمیان معاملہ تیزی سے آگے بڑھنے لگا۔

اس وقت صوفیہ کو اس بات کا قطعی اندازہ نہیں تھا کہ اس شخص سے آن لائن ملنے کے بعد وہ تین لاکھ پاؤنڈ کے قرضے تلے دب جائیں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ رومانس فراڈ یعنی محبت بھرے فریب کا شکار ہوئی ہیں اور چاہتی ہیں کہ آن لائن ڈیٹنگ ایپس اس کی روک تھام کے لیے مزید اقدامات اٹھائیں۔ صوفیہ اس شخص سے آن لائن ڈیٹ کر رہی تھیں اور حقیقی زندگی میں وہ براہ راست کبھی نہیں ملے تھے۔ صوفیہ اس شخص کو اپنا پارٹنر سمجھتی تھیں اور پھر کچھ ہی عرصے بعد انھوں نے مل جل کر ایک گھر خریدنے کے بارے میں بات کرنا شروع کر دی، چونکہ دونوں ہی گھر بسانے کے خواہشمند تھے۔

صوفیہ جب اپنے اوپر بیتی کہانی کے بارے میں سوچتی ہیں تو انھیں محسوس ہوتا ہے کہ اس شخص نے مستقبل کے بارے میں ان سے بہت سی جھوٹی باتیں کہی تھیں۔ وہ کہتی ہیں کہ اس نے گھر کی مورٹگیج کے جھوٹے دستاویزات اور وکیلوں کی ای میلز تیار کیں۔ درحقیقت وہ انھیں ایک خواب بیچ رہا تھا اور وہ (صوفیہ)اسے خرید رہی تھیں۔ صوفیہ نے مستقبل کا گھر خریدنے کے لیے ایرن کو بھاری رقوم بھیجیں جو اس (ایرن)نے ان کے حصے کے طور پر مانگی تھی۔ ان کا کہنا ہے کہ میں نے (خوابوں کا گھر حاصل کرنے کے لیے)ہزاروں پانڈ قرضے لیے اور اپنی پوری جمع پونجی، جو تقریبا پچاس سے ساٹھ ہزار پانڈز تھی، بھی اس میں لگا دی۔ پھر میں نے خاندان اور دوستوں سے بہت ساری رقم ادھار لی۔

صوفیہ کا کہنا ہے کہ انھوں نے مجموعی طور پر اس (ایرن)کو تقریبا تین لاکھ پانڈز بھیجے۔ محبت بھرے فریب کا شکار ہونے والی وہ اکیلی نہیں ہے۔ یو کے فنانس کے مطابق سنہ 2019 اور سنہ 2020 کے درمیان رومانس فراڈ سے متعلق بینک ٹرانسفر فراڈ میں 20 فیصد اضافہ ہوا۔ صوفیہ کہتی ہیں کہ جب اس (ایرن)نے مزید پچاس ہزار پانڈ مانگے تو صوفیہ نے فیصلہ کیا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ اس بارے میں سوال کیا جائے۔ صوفیہ نے اپنے بینک کو فون کیا جہاں انھیں لگتا تھا کہ ان کا ایرن کے ساتھ مشترکہ اکانٹ موجود ہو گا، کیونکہ ایران نے انھیں کچھ ایسا ہی بتایا تھا۔ بینک نے انھیں بتایا کہ اکانٹ تو موجود ہے مگر اس میں ان کا نام ہی نہیں ہے۔

صوفیہ بتاتی ہیں کہ مجھے ایسا لگا جیسے میرے پیروں کے نیچے زمین کھسک گئی ہے۔ مجھے یقین نہیں آیا، مجھے ایسا لگا کہ جیسے میں کوئی برا خواب دیکھ رہی ہوں۔ آپ کہانیاں دیکھتے ہیں، کہانیاں پڑھتے ہیں، آپ دوسرے لوگوں کی کہانیوں کے بارے میں سنتے ہیں لیکن آپ کو لگتا ہے کہ آپ کے ساتھ ایسا کبھی نہیں ہو گا۔ لیکن میرے ساتھ ایسا ہوا۔ صوفیہ کہتی ہیں میں نے اس شخص کے بارے میں تحقیقات شروع کی اور معلوم کیا کہ کیا وہ وہیں کام کرتا ہے جہاں وہ بتا رہا تھا۔ اس دفتر کے لوگوں کا کہنا تھا کہ اس نام کا کوئی شخص وہاں کام نہیں کرتا، ان کا کہنا تھا کہ آپ فورا پولیس سے رابطہ کریں اور صوفیہ نے ایسا ہی کیا۔ تھیمس ویلی پولیس نے بی بی سی کو بتایا کہ اس معاملے میں تحقیقات کی جا رہی ہے اور ابھی تک کوئی گرفتاری نہیں کی گئی تاہم تحقیقات جاری ہیں۔ پولیس نے اس کیس کے ملزم یا مدعی کی کوئی تفصیل نہیں بتائی۔ اب دو سال بعد صوفیہ کو لگتا ہے کہ ان کی حالت بہتر ہے۔ اقتصادی محتسب نے ان کے حق میں فیصلہ دیا ہے جس کا مطلب ہے کہ وہ فراڈ کا شکار ہوئی ہیں اور اس لیے بینک کو ان کے پیسے قانونی طور پر واپس کرنے چاہییں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.