انٹرنیشنل

چینی صدر دماغی مرض میں مبتلا ہو گئے

چینی صدرشی جن پنگ کی خرابیٔ صحت کے حوالے سے بھی کچھ میڈیا رپورٹس سامنے آئی ہیں

روسی صدر ولادیمیر پیوٹن کی طبیعت کی ناسازی کے بعد اب چینی صدرشی جن پنگ کی خرابیٔ صحت کے حوالے سے بھی کچھ میڈیا رپورٹس سامنے آئی ہیں۔ بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق، چینی صدر شی جن پنگ دماغی مرض’سیریبرل انیوریزم‘ میں مبتلا ہیں اور اسی وجہ سے انہیں گزشتہ سال  کے آخر میں اسپتال میں داخل بھی ہونا پڑا تھا۔ رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ ’شی جن پنگ نے بیماری کا علاج کرنے کے لیے  سرجری کروانے کے بجائے روایتی چینی ادویات سے علاج کروانے کو ترجیح دی ہے۔

سرجری کے برعکس چین کی روایتی ادویات خون کی نالیوں کو نرم کرتی ہے اور انیوریزم کو سُکیڑتی ہے۔ چینی صدر کی صحت کے بارے میں یہ قیاس آرائیاں اس وقت ہونا شروع ہوئیں جب اُنہوں نےعالمی کورونا وباء کے پھیلاؤ کے آغاز سے لے کر بینجنگ میں منعقد ہونے والے ونٹر اولمپکس تک غیر ملکی رہنماؤں سے ملنے سے گریز کیا تھا۔ جبکہ 2019 میں کورونا وباءکے پھیلاؤ کا آغاز ہونے سے قبل بھی چینی صدر کو ان کے دورۂ اٹلی کے دوران تھوڑا لنگڑا کر چلتے ہوئے اور پھر بیٹھنے کے لیے سہارا لیتے ہوئے دیکھا گیا تھا۔

اسی طرح شی جن پنگ کے شینزین میں عوام سے خطاب کے لیے تاخیر سے پہنچنے، آہستہ بولنے اور کھانسنے کی وجہ سے اکتوبر 2020 میں بھی ان کی صحت کے خراب ہونے کے حوالے سے قیاس آرائیاں کی گئیں تھیں۔ جانس ہاپکنز میڈیسن سینٹر کے مطابق، یہ دماغ میں ایک شریان کے غیر معمولی پھیلاؤ سے پیدا ہونے والا غبارہ ہے جوکہ دماغ میں خون کی نالی کی دیوار میں اندرونی پٹھوں کی تہہ کے کمزور ہونے سے ہوتا ہے۔

اس بیماری کو ’برین انیوریزم‘ یا ’انٹرا کرینیئل انیوریزم‘ بھی کہا جاتا ہے۔ ’سیریبرل انیوریزم‘ یعنی چھالے جیسے پھیلاؤ کو دوبارہ سُکیڑا بھی جاسکتا ہے اور یہ اچانک پھٹ بھی سکتا ہے۔ جانز ہاپکنز میڈیسن سینٹر کے مطابق، اگر سیریبرل انیوریزم پھیلتا ہے اور خون کی نالیوں کی دیوار بہت پتلی ہو جاتی ہے، تو اس کے پھٹ جانے سے دماغ میں ارد گرد کی جگہ پرخون بہے گا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.