پاکستان

قومی اسمبلی کےابتدائی 100 دن،عوامی نمائندوں کی کارکردگی کےپول کُھل گئے،بڑے بڑے نام نہاد بے نقاب

قومی اسمبلی کے 100 دن مکمل ہوچکے ہیں،ان سو دنوں میں وزیراعظم شہبازشریف نے صرف 2 اجلاسوں میں شرکت کی ہے اور ان کی شرکت کا تناسب 10 فیصد رہا ہے

اسلام آباد(کھوج نیوز)قومی اسمبلی کےابتدائی 100 دن،عوامی نمائندوں کی کارکردگی کےپول کُھل گئے،بڑے بڑے نام نہاد بے نقاب ہوگئے۔کھوج نیوز رپورٹ کے مطابق قومی اسمبلی کے ابتدائی 100 دن پر فافن کی پورٹ نے کارکردگی کے سارے پول کھول دیئے پاکستان کی 16 ویں قومی اسمبلی کے 100 دن مکمل ہونے پر فافن نے جو رپورٹ جاری کی ہے وہ اس قانون ساز ادارے سے وابستہ امیدوں پر سوالیہ نشان لگا رہی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ قومی اسمبلی کے 100 دن مکمل ہوچکے ہیں،ان سو دنوں میں وزیراعظم شہبازشریف نے صرف 2 اجلاسوں میں شرکت کی ہے اور ان کی شرکت کا تناسب 10 فیصد رہا ہے جب کہ گزشتہ اسمبلی میں اسی مدت کے دوران بانی پی ٹی آئی کی حاضری کا تناسب 29 فیصد تھا۔

اس کے علاوہ قومی اسمبلی کے ابتدائی 100 ایام میں مجموعی طور پر ایوان نے 66 گھنٹے 33 منٹ پر محیط 23 اجلاس منعقد کیے۔ سپیکر اور ڈپٹی سپیکر نے 84 فیصد کارروائی کی صدارت کی، تاہم ان اجلاسوں میں وفاقی وزراءکی حاضری بھی کم رہی ہے۔ رپورٹ کے مطابق ن لیگ کے صدرنوازشریف کا حاضری کا تناسب 26 فیصد، قائد حزب اختلاف عمرایوب کی اجلاس میں شرکت 88 فیصد، اسپیکرایازصادق اورڈپٹی اسپیکرقومی اسمبلی کی حاضری کا تناسب 82 فیصد رہا ہے۔
رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ قومی اسمبلی کے ایوان میں اب بھی 23 ارکان کی کمی ہے۔ قائمہ کمیٹیوں کی تشکیل میں تاخیر سے اسمبلی کارکردگی متاثر ہوئی ہے جبکہ قانون سازی کا عمل سست روی کا شکار ہے۔ابتدائی 100 روز میں 310 میں سے 159 ارکان نے متحرک انداز میں کارروائی میں حصہ لیا اور ارکان اسمبلی کی اوسط حاضری 230 اراکین اسمبلی پر مشتمل رہی۔ سنی اتحاد کونسل کے اراکین نے قومی اسمبلی کی کارروائی میں سب سے زیادہ حصہ لیا۔ اجلاسوں میں پوائنٹس آف آرڈر پر پارلیمان کے 30 فیصد وقت کا استعمال کیا گیا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button