پاکستان

محکمہ ایکسائز موٹر برانچ میں رشوت کا بازار گرم، شہری لوٹنے پر مجبور

محکمہ ایکسائز موٹر برانچ کے سسٹم میں ٹوکن ٹیکس کی عدم ادائیگی کے باعث بلاک ہونے والی گاڑیوں کی بحالی کے لئے مبینہ طور پر رشوت وصول کرنے کا انکشاف سامنے آگیا

لاہور(فیض احمد) محکمہ ایکسائز موٹر برانچ میں رشوت کا بازار گرم، شہری لوٹنے پر مجبور، عملہ اعلیٰ افسران کو سب ”اوکے ” کی رپورٹ دینے لگا ، رشوت خوری کے خلاف کارروائی کرنے والوں نے بھی چپ سادھ لی۔

تفصیلات کے مطابق ذرائع نے بتایا اہے کہ محکمہ ایکسائز موٹر برانچ کے سسٹم میں ٹوکن ٹیکس کی عدم ادائیگی کے باعث بلاک ہونے والی گاڑیوں کی بحالی کے لئے مبینہ طور پر رشوت وصول کرنے کا انکشاف ہوا ہے جبکہ شہری رشوت دینے پر مجبور ہیں ۔ذرائع کے مطابق محکمہ ایکسائز موٹر برانچ لاہور ریجن سی نے کئی سالوں سے گاڑیوں کاٹوکن ٹیکس ادا نہ کرنے والے نادہندگان کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے ان کی گاڑیوں کو سسٹم میں بلاک کر دیا تاکہ ٹوکن ٹیکس کی وصولی کے بغیر کوئی بھی شہری اپنی گاڑی فروخت نہ کر سکے اور نہ ہی کسی اور کے نام ٹرانسفر ہو سکے۔جس کی وجہ سے ایکسائز حکام نے متعدد نادہندگان کی گاڑیوں کو اپنے سسٹم میں بلاک کر دیا۔

ذرائع کے مطابق جب بعض گاڑیوں کے مالکان کو اس حوالے سے علم ہوا کہ ان کی گاڑی بلاک ہے اور وہ نہ تو فروخت ہو سکتی ہے اور نہ ہی ٹرانسفر ہو سکے گئی جس پر بعض افراد نے ٹوکن ٹیکس کی رقم ادا کر کے اپنی گاڑیوں کی۔بحالی کے لئے رابطہ کیا تو انہیں پریشان کیا گیا بعد ازاں محکمہ ایکسائز کے شعبہ آئی ٹی کے عملے نے مبینہ طور پر رشوت وصول کرنے کے بعد بعض نادہندگان کی گاڑیوں کو اپنے سسٹم میں بحال کر دیا ہے ۔ذرائع کے مطابق ایکسائز حکام نے علم ہونے پر متعلقہ عملے کے خلاف ایکشن لینے کا فیصلہ کیا ہے اور اس حوالے سے چھان بین شروع کر دی ہے ۔اور موٹر برانچ کے شعبہ آئی ٹی کے ملازمین کے خلاف سخت محکمانہ کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button