نگر نگر سے

ملک کے مختلف علاقوں میں لمپی اسکن بیماری تیزی سے پھیلنے لگی

پنجاب اور خیبرپختونخوا کے مویشیوں میں لمپی اسکن نامی بیماری پھیلنے لگی اور سیکڑوں جانور متاثر ہوگئے ہیں.

پنجاب کے شہر مظفر گڑھ کی تحصیل کوٹ ادو کے علاقوں میں روزانہ سیکڑوں جانور بیمارہورہے ہیں تاہم مقامی افسران کی توجہ نہیں ۔ آڑھتیوں نے مطالبہ کیا ہے کہ وائرس سے نمٹنے کیلئے ایمرجنسی نافذ کی جائے ۔ خیبرپختونخوا کے ضلع صوابی میں لمپی اسکن نصف دیہات میں پھیل گیا ہے اور جانوروں میں شرح اموات 30فیصد تک ہے ، صوابی کے حکام کا کہنا ہے کہ وائرس پنجاب سے آنے والے مویشیوں کی وجہ سے پھیلا۔

تفصیلات کے مطابق مظفر گڑھ کی تحصیل کوٹ ادو میں خطرناک بیماری لمپی سکن پھیل گئی ہے۔ ٹھٹھہ گورمانی ، عیسن والا، کھر غربی، گورمانی میں روزانہ سیکڑوں جانوربیمار ہو رہے ہیں لیکن محکمہ لائیو سٹاک مظفر گڑھ کے افسروں نے ابھی کوئی توجہ نہیں دی ۔

مویشی پال کسانوں نے بتایا کہ ٹھٹھہ گورمانی اورسنانواں میں سرکاری اسپتالوں کے اہلکاروہاں موجود ویکسین کی ایک بوتل آٹھ ہزار روپے میں بیچ رہے ہیں ، ایک جانور کو ٹیکہ لگانے کا چار سو روپے معاوضہ لے رہے ہیں۔

محکمہ لائیو سٹاک ٹھٹھہ گرمانی اسپتال کے انچارج ڈاکٹر جاوید نے کہا ڈسٹرکٹ انتظامیہ کو لمپی اسکن پھیلنے کے بارے میں رپورٹ کردی ہے ،عملےاور ادویات کی قلت ہے جس سے بیماری پر قابو پانے میں مشکلات ہیں۔

دوسری جانب خیبرپختونخوا کے ضلع صوابی میں ویٹرنری ڈاکٹرز کے مطابق لمپی اسکن نامی وائرس ضلع کے نصف سے زیادہ دیہات میں پھیل گیا ہے جس کے بعد حکام بالا کے احکامات پر ہنگامی بنیادوں پر ٹیمیں تشکیل دے کر ویکسی نیشن کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.