پاکستانفیچرڈ پوسٹ

شہباز شریف اور بلاول بھٹو نے فضل الرحمن سے پھر ہاتھ کر دیا

اپوزیشن نے پہلے بل کی مخالفت کی بعد میں مولانا کے ساتھ مشاورت کے بغیر ہی حمایت کر دی

مسلم لیگ ن کے صدر و قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں شہباز اور چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے ایک مرتبہ پھر مولانا فضل الرحمن سے ہاتھ کر دیا ہے۔

کھوج نیوز ذرائع کے مطابق جے یو آئی (ف)کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے ساتھ ایک بار پھر ہاتھ ہو گیا ہے،اپوزیشن نے پہلے بل کی مخالفت کی بعد میں مولانا کے ساتھ مشاورت کے بغیر ہی حمایت کر دی،خواجہ آصف نے شہباز شریف کی اپوزیشن لیڈر والی نشست پر قبضہ کرکے مسلم لیگ (ن)میں مائنس ون کر دیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ مسلم لیگ (ن)اور پیپلز پارٹی نے مشترکہ مسودہ دیا جس پر نیب قانون میں مجوزہ ترامیم واضح طور پر لکھا ہوا تھا ان کے مطالبات اتنے ناجائز تھے کہ اب یہ لوگ منہ چھپاتے پھر رہے ہیں۔شیریں رحمان،نوید قمر اور خواجہ آصف نے کہا کہ یہ ایک پیکیج ڈیل ہے،نیب کے قانون میں حکومت ہماری مرضی کی ترمیم کرے گی تو ہم ایف اے ٹی ایف پر تعاون کریں گے،اگر نیب قانون میں ترمیم نہیں ہوگی تو ایف اے ٹی ایف بل پر ووٹ بھی نہیں ملے گا۔اپوزیشن نے گزشتہ روز قومی اسمبلی میں انہیں بلزکی مخالفت کی تھی جب کہ راتوں رات ان کو پتہ نہیں کون سی عقل سلیم آگئی حمایت کر دی۔

ذرائع نے مزید بتایا ہے کہ کوئی لکھ کر تو نہیں دے گا کہ درخواست برائے حصول این آر او ہے لیکن اگر ان کے مجوزہ مسودے کو پڑھا جائے تو 34 ترامیم کے ذریعے نیب کو ختم کرنا این آر او پلس ہے۔ذرائع نے کہا کہ جمعیت علمائے اسلام (ف)نے اپوزیشن کے ساتھ شکوہ کیا ہے کہ ہم بھی کمیٹی میں آپ کے ساتھ تھے لیکن آپ نے ہمارے ساتھ مشاورت ہی نہیں کی۔

Tags
Back to top button
Close