پاکستان

نیب نےخواجہ سعد رفیق کوایک اورخوشخبری سنادی

نیب لاہور نےسابق وفاقی وزیرریلوےکیخلاف ریلوے اراضی لیزپردینےکی انکوائری بند کرنے کا فیصلہ کرلیا

ڈی جی نیب نے ریجنل بورڈ میٹنگ میں منظوری کے بعد حتمی منظوری کےلیے چیرمین نیب کو سفارشات بھیج دیں۔ خواجہ سعد رفیق پر ریلوے کی اربوں روپےکی زمین من پسد افراد کوسستے داموں لیزپردینے کا الزام تھا۔ شکایت کنندہ کا کہنا تھا کہ سعد رفیق نے لاہوروالٹن روڈ اور یو ای ٹی پراراضی 33 سال کےلیے لیزپردلوائی، انہوں نے ریڈمکوکےزریعے یہ زمین من پسند کنٹریکٹرکوفائدہ پہنچانے کے لیے دی، پاکستان ریلوے کے آفیسرزنےبھی اراضی لیزپردینے کے لیے جانچ پڑتال نہیں کی۔

ذرائع کے مطابق خواجہ سعد رفیق پر من پسند افراد کو زمین ٹھیکے پر دینے کا الزام ثابت نہیں ہوا، ریلوے نے جس کمپنی کو زمین لیز پر دی اس نے سب سے زیادہ بولی لگائی تھی، 12 پلاٹس پاکستان کے مختلف ضلعوں میں آئل کمپنیوں کو دیے گیے، بھلوال میں پلاٹ راولپنڈی کی کمپنی کودیا گیا اور رحیم یار خان میں کمرشل پلاٹ جام برادرز کو دیا گیا۔

Back to top button