پاکستانفیچرڈ پوسٹ

عمران خان پریشان، اسٹیبلشمنٹ اور اپوزیشن کے درمیان درجہ حرارت کیسے کم ہوگا؟سینئر صحافی و تجزیہ کار حفیظ اللہ نیازی نے نیا دعویٰ کر کے سب کو حیران کر دیا

موجودہ صورتحال میں اسٹیبلشمنٹ والے وزیراعظم عمران خان کو سمجھا سکتے ہیں کہ اپوزیشن رہنماں کی گرفتاریاں نہ کریں، نیب کو پیچھے ہٹائیں

عمران خان پریشان، اسٹیبلشمنٹ اور اپوزیشن کے درمیان درجہ حرارت کیسے کم ہوگا؟سینئر صحافی و تجزیہ کار حفیظ اللہ نیازی نے نیا دعویٰ کر کے سب کو حیران کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی و تجزیہ کار حفیظ اللہ نیازی کا کہنا ہے کہ عمران خان کو اس وقت تک ہلایا بھی نہیں جاسکتا جب تک مقتدر ادارے ان کے ساتھ ہے، جب وہ ان کے ساتھ کھڑے ہیں ان کو کوئی بھی نہیں ہلاسکتا، اس صورتحال میں سیاسی درجہ حرارت کو کم کرنے کے 3 ہی آپشن ہوسکتے ہیں۔ حفیظ اللہ نیازی کا کہنا تھا کہ موجودہ صورتحال میں اسٹیبلشمنٹ والے وزیراعظم عمران خان کو سمجھا سکتے ہیں کہ اپوزیشن رہنماں کی گرفتاریاں نہ کریں، نیب کو پیچھے ہٹائیں، کچھ لین دین کریں، اور اپوزیشن کے ساتھ بیٹھ کر ان کی ڈیمانڈز کو پورا کریں، کیوں کہ خطرات بہت سارے ہیں، اس صورتحال میں ملک کو مل جل کر چلانا ہے، ان حالات میں آپ کو زیادہ سپورٹ نہیں کرسکتے، لیکن یہ سب کرنے کے لیے ضروری ہے ان اندرونی طور پر پر دبا ڈالا جائے۔حفیظ اللہ نیازی کے مطابق ایک راستہ یہ بھی ہوسکتا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان اور مقتدر ادارے ایک پیج پر ہیں جیسا کے وہ برملا اظہار کر چکے ہیں، اس سے وہ اپنے اتحاد کے ذریعے اپوزیشن اتحاد کو سائیڈ لائن لگا سکتے ہیں اور یوں عمران خان 100 سالوں تک حکومت کر سکتے ہیں، لیکن اس سے ایک سیاسی عدم استحکام پیدا ہوگا۔ حفیظ اللہ نیازی کا کہنا تھا کہ دوسرا آپشن یہ ہے کہ اگر عمران خان یہ بات نہیں مانتے اور انکار کردیتے ہیں تو پھر اسٹیبلشمنٹ کیا کرے گی؟ پھر ظاہر ہے انہیں راستے کھولنے کے لیے وزیراعظم عمران خان کو فارغ کرنا پڑے گا، نہیں تو پھر ملک میں جیسا ایوب خان کے دور میں ہوچکا ہے بالکل ویسے ہی مارشل لا لگا دیا جائے گا اور اس سے صرف ریاست کا نقصان ہوگا۔

Back to top button