پاکستان

حکومت کو ایک اور زور دار دھچکا‘ بی این پی بھی اپوزیشن اتحاد میں شامل

ہم نے صوبے کے مختلف اضلاع کی پسماندگی کو ختم کرنے کے لیے وفاق سے 200 ارب روپے کے پیکج کامطالبہ کیا تھا

بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی‘ مینگل)کے رہنماء سینیٹر جہانزیب جمالدینی نے کہا ہے کہ بی این پی بھی اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم)کی حکومت مخالف تحریک میں شامل ہوگی۔

سینیٹر جہانزیب جمالدینی کا کہنا تھاکہ وفاقی حکومت کی دوغلی پالیسیوں کی وجہ سے بی این پی نے حکومت سے اپنے راستے الگ کیے، حکومت کو لاپتہ افراد کی بازیابی سمیت 6 نکات پیش کیے تھے، لیکن افسوس کی بات ہے کہ 2 سال میں ہمارے 6 نکات پر کوئی پیش رفت سامنے نہیں آئی۔ بی این پی رہنماء کا کہنا تھاکہ ہم نے صوبے کے مختلف اضلاع کی پسماندگی کو ختم کرنے کے لیے وفاق سے 200 ارب روپے کے پیکج کامطالبہ کیا تھا لیکن بلوچستان کے بجائے سندھ اور پنجاب کو پیکج دیدیا گیا، دوسرے صوبے کو ملنے کے خلاف نہیں لیکن بلوچستان کا حق ملناچاہیے۔ ان کا کہنا تھاکہ سندھ اور بلوچستان کے جزائر کو وفاق کے حصے میں شامل کرنے کی باتیں ہو رہی ہیں، اس اقدام کی مذمت کرتے ہیں اور اسے عدالت میں چیلنج بھی کریں گے۔

Back to top button