پاکستان

ہم پرغداری کےمقدمے بن سکتےہیں تو،شاہد خاقان عباسی نےوارننگ دیدی

سابق وزیراعظم کا کہنا ہےکہ سرکاری افسروں کوبلا کرہمارے خلاف مقدے درج کرائےگئے

سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہےکہ سرکاری افسروں کوبلا کرہمارے خلاف مقدے درج کرائےگئے،نیب کےکیسزاب پیچھے رہ گئےاب توغداری کے مقدمات بن رہےہیں۔   پی ایس اومیں غیرقانونی بھرتی کیس میں سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اوردیگرملزمان کراچی کی احتساب عدالت میں پیش ہوئے، تاہم عدالت نے بغیرکارروائی کےہی سماعت 2 نومبرتک ملتوی کردی۔

بعدازاں میڈیا سےبات کرتےہوئےشاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ آج پھرنیب عدالت میں پیشی تھی اورحسب معمول کیس نہیں چلا،ہمارے کیسز میں کرپشن نہیں اختیارات کےناجائزاستعمال کا ذکرہے،عدالت کےپوچھنےپربھی نیب جرم ثابت نہیں کرسکا، سرکاری افسروں کوبلا کرہمارے خلاف مقدمےدرج کرائےگئے،نیب کےکیسزاب پیچھےرہ گئےاب توغداری کےمقدمات بن رہے ہیں۔

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ نیب یکطرفہ احتساب کررہا ہےاورسیاسی مخالفین کودبانے کیلئے استعمال ہورہا ہے، خود عدالتیں کہہ رہی ہیں کہ نیب پولیٹیکل انجینئرنگ کررہاہے،بد نصیبی ہےیہ ایسا ادارہ ہےجس کےبارے میں اعلی عدالتوں کی آبزرویشن آچکی ہے،حکومت یا پاکستان کوچلائےگی یا نیب کوچلائےگی، پاکستان اورنیب اکٹھےنہیں چل سکتے۔

شاہد خاقان عباسی نےکہا کہ وزیراعظم بےخبرآدمی ہیں،انہیں آٹے،چینی ،مہنگائی،بیروزگاری اورغداری کےمقدمےکا علم ہی نہیں،میں بھی عمران خان کےخلاف مقدمہ کرنا چاہتا ہوں، ہم پرغداری کےپرچےدرج ہوسکتےہیں توان پربھی آئین سےانحراف کا پرچہ ہونا چاہئے، جو شخص کہےکہ میں جمہوریت ہوں اس کےبارے میں کیا کہا جاسکتاہے،کرپٹ حکومت کورکھنا تباہ کن ہے،ان کوجانا پڑے گا۔

Back to top button