پاکستان

لاہورپولیس کےسربراہ کی جونئیرافسر کے ہاتھوں ٹھکائی

ڈی آئی جی انوسٹی گیشن نےسی سی پی لاہورکوسنبھالا اوردیگرافسران ایس پی سی آئی اے کوکمرے سےباہرلےگئے

لاہورپولیس کےسربراہ کی جونئیرافسرکے ہاتھوں ٹھکائی،کھوج نیوزذرائع کےمطابق پولیس ذرائع کےمطابق لاہورپولیس کےسربراہ عمرشیخ کی جانب سےگزشتہ رات ڈیڑھ بجےسیف سٹی اتھارٹی میں میٹنگ بلائی گئی، میٹنگ کا ایجنڈا مسلم لیگ ن اورپی ڈی ایم کا گوجرانوالہ میں جلسہ تھا۔ ذرائع کا کہنا ہےکہ میٹنگ میں دونوں ڈی آئی جیزسمیت تمام افسران کوبلایا گیا تاہم ایس پی سی آئی عاصم افتخارنےبوجہ بخارمیٹنگ میں آنےسےمعذرت کی،لیکن سی سی پی اوعمرشیخ نےانہیں فوری طورپر میٹنگ میں پہنچنےکا حکم دیا، ایس پی سی آئی اےعاصم افتخار پہنچےاوراپنی طبعیت نا سازی کا بتایا،لیکن پھربھی سربراہ لاہورپولیس عمرشیخ ایس پی سی آئی کےتاخیرسےپہنچنےپربرہم ہوگئے۔

ذرائع کےمطابق سی سی پی اوکی سرزنش پرایس پی سی آئی اے بھی مشتعل ہوگئے،اورایس پی سی آئی اےعاصم افتخاراورسی سی پی لاہور عمرشیخ میں تلخ جملوں کا تبادلہ ہوگیا،اوربات ہاتھا پائی تک جاپہنچی،دونوں پولیس افسران تلخ کلامی کےبعد ایک دوسرے کی طرف لپکے لیکن ڈی آئی جی انوسٹی گیشن نےسی سی پی لاہورکوسنبھالا اوردیگرافسران ایس پی سی آئی اے کوکمرے سےباہرلےگئے۔

واقعےکےبعد سی سی پی اوعمرشیخ نےوہاں موجود ایس پی سول لائنزکوایس ایچ اوریس کورس کوبلانےاورایس پی سی آئی اے کےخلاف 155 سی کی کاروائی کا حکم دیا، جب کہ سی سی پی اولاہورنےایس پی سی آئی اے کےگن مین اوراسٹاف کلوزکروا دیا، تاہم میٹنگ کےبعد افسران کےکہنےپر 155 سی کی کاروائی روک دی گئی۔

Back to top button