پاکستانفیچرڈ پوسٹ

نوازشریف کا بیانیہ اچانک انقلابی کیسے ہو گیا؟

سابق وزیراعظم نوازشریف نےخاموشی توڑ دی اوراب لوگ ان کے اچانک انقلابی بننے پربھی سوال اٹھاتے ہیں

سابق وزیراعظم نوازشریف نےخاموشی توڑ دی اوراب لوگ ان کے اچانک انقلابی بننے پربھی سوال اٹھاتے ہیں لیکن جب یہی سوال لوگوں نے سلیم صافی سےکیا تو انہوں نےجواب میں ایک قصہ سنا دیا اوریہی قصہ انہوں نے  اپنے کالم میں بھی لکھ دیا۔ اخبارمیں سلیم صافی نے لکھا کہ ” ہمارے علاقےمیں ایک نواب صاحب پورے علاقےمیں بدزبانی کےلئےمشہورتھے۔ بات بات پراپنےگھریلو ملازم کو ماں بہن کی گالی دیا کرتےتھے۔ پانی اورچائےکا آرڈردیتےوقت بھی گالی ساتھ ملانا ضروری سمجھتےتھے۔ غریب ملازم اپنی مجبوری کی وجہ سےیہ سب کچھ برداشت کرتےرہے لیکن ایک دن ان کا پیمانہ صبرلبریزہوگیا اورجب نواب صاحب نےگالی دی توملازم نے باقاعدہ اہتمام کےساتھ کہا کہ بسم اللہ توکلت علی اللہ اورپھرنواب صاحب کومخاطب کرکےماں بہن کی گالیاں دینےلگے۔

کئی ماہ سےان کا دل بھرگیا تھا چنانچہ جتنی گالیاں یاد تھیں،ایک سانس میں دے ڈالیں۔ اس کےبعد راوی خاموش ہےکہ نواب صاحب کا ردعمل کیا تھا اورانہوں نےملازم کےساتھ کیا سلوک کیا۔ لوگ مجھ سےسوال کرتےہیں کہ یہ میاں نوازشریف اچانک اس حد تک انقلابی کیسے بن گئےتومیں یہ لطیفہ سنا دیتا ہوں۔ میں انہیں یہی جواب دیتا ہوں کہ تنگ آمد بجنگ آمد کے مصداق میاں صاحب نے بھی نواب صاحب کے ملازم کی طرح توکل کرکے دل کی بھڑاس تونکال دی لیکن اب آنے والا وقت بتائے گا کہ دوسرا فریق ان کے ساتھ کیا کرتا ہے؟ خود میاں صاحب کتنی استقامت دکھاتے ہیں اور ان کے کارکن اور عوام کتنا ساتھ دیتے ہیں؟ جہاں تک مولانا فضل الرحمٰن کا تعلق ہے تو وہ توکل کرکے جوابی گالی الیکشن کے بعد سے ہی دے رہےہیں۔ اسی طرح بلوچ اورپختون قوم پرست بھی روزاول سے جوابی گالی دے رہے ہیں ۔

Back to top button