پاکستانفیچرڈ پوسٹ

چیئرمین نیب کو لینے کے دینے پڑ گئے، اب اپنا حساب بھی دینا ہوگا‘ جسٹس (ر) جاوید اقبال کے اثاثہ جات کی تفصیلات طلب کرلی گئیں

پاکستان انفارمیشن کمیشن نے ایک شہری کی طرف سے چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین نیب کے اثاثوں کی تفصیل حاصل کرنے کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا

چیئرمین احتساب بیورو (نیب) کو لینے کے دینے پڑ گئے ہیں اور اب ان کو اپنا حساب بھی دینا ہوگا جبکہ جسٹس (ر) جاوید اقبال کے اثاثہ جات کی تفصیلات بھی طلب کر لی گئی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان انفارمیشن کمیشن نے ایک شہری کی طرف سے چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین نیب کے اثاثوں کی تفصیل حاصل کرنے کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا ہے۔ پاکستان انفارمیشن کمیشن کا فیصلہ انفارمیشن کمشنر زاہد عبداللہ نے لکھا ہے۔ کمیشن نے قرار دیا ہے کہ قومی احتساب بیورو (نیب)کے چیئرمین، ڈپٹی چیئرمین کے اثاثوں کی تفصیلات نہیں دی جا سکتیں، ڈائریکٹرز، اسسٹنٹ ڈائریکٹرز کے اثاثوں کی معلومات بھی نہیں دی جا سکتیں۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ نیب کے ریجنل ڈی جیز کے اثاثوں کی معلومات بھی نہیں دی جا سکتیں۔ کمیشن نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ نیب افسران اور اہلِ خانہ کے اثاثے عام کرنے سے ان کی پرائیویسی کو نقصان پہنچ سکتا ہے، نیب افسران اور ان کے اہلِ خانہ کے اثاثوں کی نجی معلومات مفادِ عامہ میں نہیں۔ کمیشن نے اپنے فیصلے میں یہ بھی کہا ہے کہ نیب اپنیافسران کے خلاف تمام تحقیقاتی رپورٹس 28 نومبر تک عام کرے۔

متعلقہ خبریں