پاکستانفیچرڈ پوسٹ

سابق وزیراعظم نوازشریف کا بیانیہ مقبولیت کے آسمانوں پر پہنچ گیا‘ بات جلسوں سے آگے نکل کر کہاں تک جا پہنچی سب کچھ سامنے آگیا

میاں صاحب نے نام کیوں لئے؟ یہ وہ سوال ہے جو نہ صرف اپوزیشن بلکہ ن لیگ کے رہنما بھی ایک دوسرے سے پوچھتے دکھائی دیتے ہیں

مسلم لیگ ن کے تاحیات قائد و سابق وزیراعظم میاں نوازشریف کا بیانیہ مقبولیت کے آسمانوں پر پہنچ گیا، بات جلسوں سے آگے نکل کر بہت دور جا پہنچی ہے۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی عاصمہ شیرازی نے اپنے کالم میں لکھا ہے کہ اپوزیشن کا وہ بیانیہ ہے جس میں میاں نواز شریف کی زبان سے ادا شدہ چند نام بیانیے سے زیادہ اہمیت اختیار کر گئے ہیں۔ میاں صاحب نے نام کیوں لئے؟ یہ وہ سوال ہے جو نہ صرف اپوزیشن بلکہ ن لیگ کے رہنما بھی ایک دوسرے سے پوچھتے دکھائی دیتے ہیں۔ ناموں کا دھچکا صرف بلاول کو ہی نہیں لگا بلکہ مولانا بھی چونک اٹھے۔ خطرہ چار سو چالیس نے اپوزیشن کو بہر حال دہلا دیا ہے۔ یہ بحث اپنی جگہ کہ میاں صاحب کو نام لینے چاہیے تھے یا نہیں مگر اپوزیشن اب نقصان کی تلافی کی کوشش ضرور کر رہی ہے۔

رہی بات بیانیے کی تو پی ڈی ایم کے حالیہ سربراہی اجلاس میں سب پہلے سے طے شدہ اعلامیے پر متفق دکھائی دیے۔ بات جلسوں سے آگے بڑھتی اور لانگ مارچ تک جاتی دکھائی دے رہی ہے۔ اب کی بار اپوزیشن اعلامیے کو ایک نئے میثاق میں ڈھالنے میں مصروف ہے جس میں پہلے نمبر پر حکومت کی برطرفی اور دوسرے نمبر پر اسٹیبلشمنٹ کے سیاست میں کردار کے خاتمے پر زور دیا گیا ہے۔ کشمیر پر سودا بازی کے خلاف اور سچائی کمیشن کی تشکیل جیسے مطالبات بھی سامنے لائے جاچکے ہیں۔

Back to top button