پاکستانفیچرڈ پوسٹ

اسٹیبلشمنٹ سے بات کرنے کا معاملہ، پی ڈی ایم ٹوٹ پھوٹ کا شکار‘ مولانا فضل الرحمن اور مریم نوازمیں اختلافات کی خبریں گردش کرنے لگیں

اصلاحات کی طرف جانے کیلئے ذمہ دار ہی سے بات مریم نواز اور بلاول بھٹو نہیں کرسکتے، اسٹیبلشمنٹ سے بات پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم پر ہوگی

اسٹیبلشمنٹ سے بات کرنے کے معاملہ پر پی ڈی ایم ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہونے لگی جبکہ فضل الرحمن اور مریم نوازکے درمیان اختلافات کی خبریں بھی گردش کررہی ہیں۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ جمعیت علماء اسلام اور پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے مریم نوازکے اسٹیبلشمنٹ سے مذاکرات کرنے کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ مریم نواز اور بلاول بھٹو کے الفاظ میں تعبیر کا فرق ہوسکتا ہے مگر دھاندلی کے ذمہ دار کا نہیں۔ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اصلاحات کی طرف جانے کے لئے ذمہ دار ہی سے بات کرنی ہوگی، بلاول اور مریم کے الفاظ میں تعبیر کا فرق ہوسکتا ہے مگر دھاندلی کے ذمہ دار کا نہیں۔ فضل الرحمان نے کہا کہ کچھ لوگ شخصیات کا نام لینے سے اس لیے گریز کرتے ہیں کہ اس سے ادارے کا تاثر بنتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ سے مذاکرات ہوئے تو پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے ہوں گے، بلاول اور مریم کے بیانات میں کوئی تضاد نہیں، موجودہ حکومت کا دھاندلی کی پیداوار ہونے پر دونوں کا اتفاق ہے۔ مولانا فضل الرحمان نے مزید کہا کہ آئی جی سندھ واقعے پر انکوائری میں مثبت پہلو بھی ہے، ٹرمپ ہٹ گیا مودی اور عمران کا وقت بھی آنے والا ہے، حکومتی جلسوں سے کورونا نہیں پھیلتا تو اپوزیشن کے جلسوں سے بھی نہیں پھیلے گا، پی ڈی ایم کے جلسے ہر صورت ہوں گے۔

Back to top button