پاکستان

مدت ملازمت میں توسیع،سابق آرمی چیف نےحقیقت کھول دی

سابق آرمی چیف جنرل (ر) راحیل شریف کا کہنا ہےکہ وہ مدت ملازمت میں توسیع نہیں چاہتےتھے

سابق آرمی چیف جنرل (ر) راحیل شریف کا کہنا ہےکہ وہ مدت ملازمت میں توسیع نہیں چاہتےتھےاوروہ اس کا پہلےہی اعلان کرچکےتھے  لیکن مسلم لیگ ن کےبعض رہنما چاہتےتھےکہ وہ توسیع لیں۔ سینئرصحافی انصارعباسی کےمطابق انہوں نےلیفٹیننٹ جنرل (ر) امجد شعیب کےذریعےسابق آرمی چیف جنرل (ر) راحیل شریف کےساتھ رابطہ کیا۔ جنرل راحیل شریف نےامجد شعیب کوبتایا کہ جب وہ وزیراعظم دفتر میں نوازشریف سےملاقات کےبعد وہ جانےلگےتوشہبازشریف اورچوہدری نثارعلی خان ان تک پہنچے۔ لیکن انہوں نےان پرواضح کیا کہ وہ اپنی مدت ملازمت میں توسیع نہیں چاہتےکیونکہ وہ کئی ماہ قبل ہی اپنی تین سالہ مدت مکمل کرنےکےبعد مزید توسیع نہ لینےکا اعلان کر چکےتھے۔

راحیل شریف کےمطابق مسلم لیگی رہنماؤں کا اس بات پرزورتھا چونکہ ملک اب بھی دہشت گردی کےخلاف برسرپیکارہے،جنرل راحیل شریف نےکراچی کا امن بحال کیا لہٰذا حکومت چاہتی ہے کہ وہ خدمات جاری رکھیں۔ انگریزی اخبار دی نیوز میں شائع رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ امجد شعیب کےمطابق جب راحیل شریف نےدوبارہ ہچکچاہٹ کا اظہارکیا توانہیں فیلڈ مارشل کےعہدے کی پیشکش کی گئی جس پر انہوں نےپھرسےانکارکیا کیونکہ وہ کوئی ایسا سربراہی کا علامتی عہدہ نہیں چاہتےتھےجہاں ان کےلئےکرنےکوکچھ نہ ہو ۔ تب دعویٰ کیا جاتا ہےکہ مسلم لیگ (ن) کےرہنماؤں نےجنرل راحیل شریف سےکہا کہ حکومت فیلڈ مارشل کےعہدے کوبا اختیاربنانےپرغورکررہی ہے۔

جنرل راحیل شریف نےامجد شعیب کوبتایا کہ انہوں نےکبھی بھی اپنےطورپرکسی سےاس معاملےپربات نہیں کی۔ خیال رہےکہ جنرل راحیل شریف کی مدت ملازمت میں توسیع کا معاملہ گزشتہ دنوں اس وقت سامنےآیا جب لیفٹیننٹ جنرل (ر) غلام قادربلوچ نےمسلم لیگ ن سے علیحدگی کا اعلان کیا  ۔ انہوں نےبتایا کہ انہیں اس وقت کےوزیراعظم نوازشریف نےکہا تھا کہ راحیل شریف اپنی مدت ملازمت میں توسیع کےخواہاں ہیں۔

Back to top button