پاکستان

پنجاب پولیس نےبھی میڈیا ونگ بنالیا لیکن کیوں؟

سرکاری ترجمان کی حیثیت سےمقررکردہ پی پی آئی اومیڈیا ہاؤسز،ممتازصحافیوں اوررائے عامہ کے رہنماؤں کے ساتھ رابطہ قائم کریں گے

پنجاب پولیس نےنوتشکیل شدہ انفارمیشن مینجمنٹ اورڈیٹا شیئرنگ سسٹم کےتحت ڈپٹی انسپکٹرجنرل (آپریشنز) سہیل اخترسکھیرا کو محکمے کا باضابطہ ترجمان مقررکرلیا۔  یہ عہدہ انٹرسروسزپبلک ریلیشن (آئی ایس پی آر) کی طرزپربننےوالےایک نیوزونگ،پنجاب پولیس انفارمیشن بینک (پی پی آئی بی) کےتحت تشکیل دیا گیا ہے۔ انسپکٹر جنرل پنجاب پولیس انعام غنی کے جاری کردہ حکم نامے کےمطابق پی پی آئی بی پنجاب پولیس کی آوازبننےکےلیےملکی اوربین الاقوامی الیکٹرانک، پرنٹ اورسوشل میڈیا کوپولیس کی خبریں اورمعلومات نشرکرنے کے لیے میڈیا اورتعلقات عامہ کےشعبےکی حیثیت سےکام کرے گی۔

جاری کردہ نوٹیفکیشن میں کہا گیا کہ ‘پنجاب پولیس اورانفارمیشن برانچ کےفرائض کوعام کرنےکےلیےپنجاب پولیس آرڈر 2002 کےآرٹیکل 27 کےتحت یہ حکم جاری کیا گیا ہے’۔ پی پی آئی بی کےبنیادی مقاصد باہمی تعاون کےساتھ، شفاف،ذمہ داراورجوابدہ سیکشن قائم کرنا، معلومات کےتبادلےکےعمل اورطریقہ کارکےلیےادارہ بنانا اورمثبت اورپیشہ ورانہ کوششوں کےذریعےپنجاب پولیس کا نرم اورمثبت تصور پیش کرنا ہیں۔ نوٹیفکیشن کےمطابق اس کا دوسرا مقصد میڈیا اورعوام کےساتھ اعتماد کا رشتہ قائم کرنا ہے۔ احکامات کےتحت پی پی آئی بی صوبائی پولیس کا لازمی حصہ ہوگی جس کی سربراہی پی پی آئی اوکرے گی جس کی متعلقہ عملہ اورملازمین مدد کریں گے۔

احکامات میں لکھا تھا کہ ‘پنجاب پولیس کےسرکاری ترجمان کی حیثیت سےنومقررکردہ پی پی آئی اومیڈیا ہاؤسز،ممتازصحافیوں اوررائےعامہ کےرہنماؤں کےساتھ رابطہ قائم کریں گے’۔ ترجمان، ضلعی اورعلاقائی یونٹ کےتعلقات عامہ کےافسران کےساتھ بھی رابطہ قائم کریں گے، حقائق کی درست نمائندگی اورمعلومات کا تبادلہ یقینی بنائیں گےاورپولیس اورعوام کےدرمیان اعتماد کےفروغ کوتخلیقی طریقےسےحل کرنے کےقابل بنائیں گے۔عہدیدارپولیس کےبارے میں پرنٹ،الیکٹرانک اورسوشل میڈیا نیوزآئٹمز،تصاویراورویڈیوفوٹیج کےلیےڈیٹا بینک کوبرقرار رکھنےکےبھی ذمہ دارہوں گے۔ کہا گیا کہ میڈیا سےگفتگو،بریفنگزاورریلیززکےتمام معاملات جاری ہونےسےقبل پی پی آئی اوسےاجازت طلب کی جائےگی۔

متعلقہ خبریں