پاکستانفیچرڈ پوسٹ

پاکستان میں کورونا وائرس پھیلانے کا ذمہ دار کون؟ چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے سرعام اعتراف کرکے ملک میں نیا ہنگامہ کھڑا کر دیا

نیب کے خلاف مذموم پراپیگنڈا تواتر سے جاری ہے اور بس اب تک یہ نہیں کہا گیا کہ کورونا بھی نیب نے پھیلایا ہے

پاکستان میں کورونا وائرس پھیلانے کا ذمہ دار کون؟ چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے سرعام اعتراف کرکے ملک میں نیا ہنگامہ کھڑا کر دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو (نیب)کے چیئرمین جسٹس (ر)جاوید اقبال نے کہا ہے کہ نیب کے خلاف مذموم پراپیگنڈا تواتر سے جاری ہے اور بس اب تک یہ نہیں کہا گیا کہ کورونا بھی نیب نے پھیلایا باقی ہر الزام نیب پر آگیا ہے۔ اسلام آباد میں ایوان صنعت و تجارت میں تاجروں سیخطاب کرتے ہوئے چیئرمین نیب نے کہا کہ ہمارے ہاتھ میں کشکول ہے، ملک اربوں ڈالر کا مقروض ہے، معیشت مضبوط ہوگی تو ملک مضبوط ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں کرپشن کے خلاف کسی نہ کسی نے قدم بڑھانا تھا تو وہ نیب نے بڑھایا، وہ لوگ جسے آپ آنکھ اٹھاکر دیکھ نہیں سکتے تھے اور انہیں بلانے کا خواب میں سوچ نہیں سکتے تھے لیکن نیب نے انہیں بلایا اور ان سے کہا کہ چند سال پہلے تک آپ کے پاس موٹر سائیکل ہوتی تھی آج دبئی میں پلازہ کہاں سے آئے اس پر ان کا کوئی جواب نہیں تھا۔

چیئرمین نیب کا کہنا تھاکہ جب نیب سے جاں گا تو بتاں گا کتنی دھمکیاں اور لالچ ہے، جب نیب میں آیا تو عہد کیا تھا جو کچھ ملک کے لیے کرسکا توکروں گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے 1235 ریفرنسز عدالتوں میں ہیں، اس کا ایک فیصد بھی بزنس مین کے خلاف نہیں بنتا، جنہیں لوگ کنگ میکر کہتے ہیں ان سے اربوں ڈالر لیے، کسی دھمکی سے نہیں لیے بلکہ پلی بارگین سے لیے جو قانون میں ہے۔ جسٹس (ر)جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ کوئی شخص ان ٹچ ایبل نہیں ہے، نیب کو سختی سے ہدایات کی ہیں کسی بزنس مین کو ٹیلی فون کرکے نیب کے دفتر میں نہیں بلایا جائیگا، اگر کسی کوبلانا ہوگا تو خود بلاں گا۔

چیئرمین نیب نے کہا کہ اب تو ٹی وی کھولیں نیب کے علاوہ کوئی بات نہیں، نیب کے خلاف مذموم پراپیگنڈا تواتر سے جاری ہے، بس اب تک یہ نہیں کہا گیا کہ کورونا بھی نیب نے پھیلایا، باقی ہر الزام نیب پر آیا جسے خندہ پیشانی سے قبول کیا لیکن ہمارا جو کام ہے وہ ہم اطمینان سے کررہے ہیں اور کرتے رہیں گے، کوئی دھونس، دھمکی، اور بلیک میلنگ راستے میں رکاوٹ نہیں بن سکتی۔ ان کا کہنا تھا کہ دعوے سے کہتا ہوں اگر ثابت ہوجائے کہ ایک تاجر بھی نیب کی وجہ سے ملک چھوڑ گیا تو یہاں سے نیب کے دفتر جانے کے بجائے گھر چلا جاں گا جب کہ آج تک ایسا نہیں ہوا کہ آدمی بیمار ہو اور میں کہوں کہ نیب حوالات میں رکھیں، پوری کوشش ہوتی ہے کہ اسے اسپتال لے جائیں، نیب کے خلاف وہ لوگ پراپیگنڈا کررہے ہیں جن کے خلاف تحقیقات ہورہی ہے یا ریفرنسز عدالت میں ہیں، جو محسوس کرے زیادتی ہوئی ہے تو نیب کیخلاف عدالت جائیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button