پاکستان

پاکستان ترقی کی راہ پر کیسے گامزن ہوگا؟ کس قسم کے اقدامات کرناہوں گے؟ کاروباری طبقے کا کردار کیا ہوگا؟ مفید مشورہ دیدیا گیا

اگر یہ بڑے بڑے کاروباری لوگ اپنی اپنی کمائی کا پورا ٹیکس ادا کرنا شروع کر دیں تو پاکستان کا ٹیکس ریونیو بہت بڑھ سکتا ہے

پاکستان ترقی کی راہ پر کیسے گامزن ہوگا؟ کس قسم کے اقدامات کرناہوں گے؟ کاروباری طبقے کا کردار کیا ہوگا؟ اس حوالے سے حکمرانوں کو مفید مشورہ دیدیا گیاہے۔

تفصیلات کے مطابق یعنی آپ اپنے کاروبار اور بزنس سے پیسہ بہت زیادہ کماتے ہیں لیکن ٹیکس گوشواروں میں اصل منافع شو نہیں کرتے۔ اِس کمائی سے جو بلیک منی ہوتی ہے اسے جائز کرنے کے لئے منی لانڈر کرنے کے لئے حوالہ، ہنڈی، ٹی ٹی جیسے طریقے اپنائے جاتے ہیں اور یہ بھی قانون 1992میں بنایا گیا کہ بیرون ملک سے بینکنگ چینل سے بھیجے گئے ڈالرز کے بارے میں کوئی سوال نہیں پوچھا جا سکتا۔ چاہے کسی بھی شوگر مل یا کسی دوسری انڈسٹری کے کروڑ پتیوں، ارب پتیوں کو دیکھ لیں تقریبا ہر کیس میں آپ کو یہی منی لانڈرنگ کے طریقے نظر آئیں گے۔

اگر یہ بڑے بڑے کاروباری لوگ اپنی اپنی کمائی کا پورا ٹیکس ادا کرنا شروع کر دیں تو پاکستان کا ٹیکس ریونیو بہت بڑھ سکتا ہے۔ گویا شریف فیملی جو گزشتہ کئی دہائیوں سے بزنس میں ہے، وہ انہی طریقوں پر چلتی رہی جو عمومی طور پر ہمارا کاروباری طبقہ، اس کا تعلق چاہے کسی بھی سیاسی جماعت سے ہو، کا طریقہ کار رہا اور شاید اب بھی ہے۔ ویسے تو یہ ٹیکس کے محکمے کا معاملہ ہے لیکن جو لوگ حکومتی عہدوں پر رہے ہوں ان کے کیس میں یہ نیب کے قانون کے تحت آمدن سے زائد اثاثے بنانے کا جرم ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button