پاکستان

پاکستانی بزنس مین کی امریکا کے حوالے کرنے کا فیصلہ سنا دیا گیا کس ملک کی عدالت نے امریکا کو خوشخبری سنائی؟ سب پتا چل گیا

پاکستانی برنس مین اور ابراج گروپ کے بانی عارف نقوی کو امریکہ کے حوالے کرنے کا فیصلہ سنا دیا گیا‘ یہ فیصلہ برطانوی عدالت نے سنایا

پاکستانی بزنس مین کو امریکا کے حوالے کرنے کا فیصلہ سنا دیا گیا، کس ملک کی عدالت نے امریکا کو خوشخبری سنائی؟ اس حوالے سے سب پتا چل گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی عدالت نے امریکہ کی درخواست پر حوالگی کا فیصلہ سنایا۔ لندن ویسٹ منسٹر مجسٹریٹ کورٹ نے امریکہ کی درخواست پر فیصلہ سنایا۔ عارف نقوی کو جعلسازی اور منی لانڈرنگ سمیت 16 الزامات پر 300 برس کی سزا ہو سکتی ہے۔ واضح رہے کہ عارف نقوی ایک پاکستانی بزنس مین ہیں۔ ان کا ابراج گروپ افریقہ، ایشیا، لاطینی امریکہ، مشرق وسطی اور وسطی ایشیا میں بھاری سرمایہ کاری کے امور چلا رہا تھا۔ عارف نقوی نے 2002 میں اپنی کمپنی قائم کی اور اس وقت کمپنی کے اصل اثاثوں کی مالیت صرف 6 کروڑ امریکی ڈالر تھی۔ جس کے بعد عارف نقوی تیزی سے ترقی کرتے چلے گئے اور جلد ہی اپنا نام بنا لیا۔ 2017 میں عارف نقوی کے اثاثوں کی مجموعی مالیت 13.6 ارب ڈالر تک پہنچ گئی تھی۔ اگست 2019 میں متحدہ عرب امارات نے دبئی کی غیرفعال کمپنی ابراج گروپ کے بانی عارف نقوی کو ان کی غیر موجوگی میں ایئر عربیہ کے مقدمے میں 3 سال قید کی سزا سنائی تھی۔ دبئی کے فنانشل سینٹر واچ ڈاگ نے سرمایہ کاروں کو گمراہ کرنے اور ان کے پیسے ناجائز طریقے سے استعمال کرنے کے الزام میں ابراج گروپ پر 31 کروڑ 50 لاکھ ڈالر کا جرمانہ عائد کیا تھا۔

عارف نقوی کے قانونی نمائندے نے اس سزا کے حوالے سے کسی بھی قسم کی رائے دینے سے انکار کردیا تھا جبکہ ایئر عربیہ کے نمائندے گفتگو کے لیے دستیاب نہیں تھے۔ واضح رہے کہ ابراج گروپ کے بانی عارف نقوی پر امریکہ میں بھی فراڈ کے الزامات عائد ہیں، انہوں نے مئی 2019 میں برطانوی تاریخ کے سب سے بڑے سکیورٹی بونڈ کی ادائیگی کر کے ضمانت حاصل کی تھی۔

امریکہ حوالگی کے حوالے سے اپنے مقدمے کی سماعت کے منتظر عارف نقوی مشروط ضمانت کے عدالتی حکم کے تحت ایک الیکٹرانک ٹیگ پہننے اور لندن میں اپنے گھر میں رہنے کے پابند تھے۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ ابراج گروپ نے ایئر عربیہ سے رقم وصول کی تھی جس کے بورڈ میں عارف نقوی بھی موجود تھے، تاہم اس رقم کو ابراج گروپ کے فنڈز کے خسارے کو پورا کرنے اور سرمایہ کاروں کو گمراہ کرنے کے لیے استعمال کیا گیا۔

عارف نقوی اس سے قبل شارجہ میں بھی ایک مقدمے کا سامنا کر چکے ہیں اور ان پر کروڑوں ڈالر کے چیک بانس ہونے کا الزام عائد کیا گیا تھا۔ اس مقدمے میں بھی انہیں 3 سال کی سزا ہوئی تھی تاہم درخواست گزار سے معاملات طے ہونے پر اس مقدمے کو فوری طور پر ختم کردیا گیا تھا۔ یاد رہے کہ مئی 2019 میں دیوالیہ ہونے سے قبل ابراج گروپ مشرق وسطی اور شمالی افریقہ کا سب سے بڑا فنڈز کا گروپ تھا تاہم گیٹس فانڈیشن سمیت دیگر سرمایہ کاروں نے ایک ارب ڈالر کے صحت عامہ کے فنڈز کی منیجمنٹ پر تحفظات کا اظہار کیا تھا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button