پاکستانفیچرڈ پوسٹ

حکومت سینیٹ انتخابات اوپن بیلٹ سے کروانا چاہتی ہے تو پھر اسے چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین کے انتخاب میں تبدیلی؟ سینئر صحافی حامد میر نے آئینہ دکھا دیا

حکومت چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کے الیکشن میں تو سیکرٹ بیلٹ چاہتی ہے لیکن ارکانِ سینیٹ کے الیکشن میں اوپن بیلٹ کی خواہاں ہے

حکومت سینیٹ انتخابات اوپن بیلٹ سے کروانا چاہتی ہے تو پھر اسے چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین کے انتخاب میں تبدیلی؟ سینئر صحافی حامد میر نے آئینہ دکھا دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی حامد میر کا کہنا تھا کہ آرڈیننس میں یہ بھی کہا گیا کہ اس قانون کا اطلاق اس صورت میں ہو گا کہ اگر سپریم کورٹ یہ رائے دے دیتی ہے کہ سینیٹ کا الیکشن آئین کی دفعہ 226کے دائرہ کار میں نہیں آتا۔ دوسرے الفاظ میں حکومت چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کے الیکشن میں تو سیکرٹ بیلٹ چاہتی ہے لیکن ارکانِ سینیٹ کے الیکشن میں اوپن بیلٹ کی خواہاں ہے۔ صدر نے حکومت کی طرف سے دفعہ 186کے تحت سپریم کورٹ میں دائر ریفرنس کے فیصلے کا انتظار کئے بغیر ہی آرڈیننس جاری کر دیا تھا۔ کے یو جے کے سیمینار میں بہت سے معروف وکلا شریک تھے اور وہ اس آرڈیننس کو آئین کی روح کے منافی قرار دے رہے تھے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button