پاکستانفیچرڈ پوسٹ

سرکاری ملازمین کی تنخواہیں بڑھانے کا معاملہ ایک بار پھر لٹک گیا‘ حکومت تنخواہوں میں اضافہ کرنے سے پہلے کہاں سے اجازت لینے کی پابند ہوگی؟ نیا کٹا کھل گیا

سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کرنے سے حکومت کو 16 ماہ میں 40 ارب روپے کے اضافی اخراجات برداشت کرنا ہوں گے

سرکاری ملازمین کی تنخواہیں بڑھانے کا معاملہ ایک بار پھر لٹک گیا‘ حکومت تنخواہوں میں اضافہ کرنے سے پہلے کہاں سے اجازت لینے کی پابند ہوگی؟ نیا کٹا کھل گیا

تفصیلات کے مطابق وزارت خزانہ نے کہا ہے کہ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کے لیے انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ(آئی ایم ایف)سے اجازت کی ضرورت نہیں، آئی ایم ایف قدغن نہیں لگاتا تاہم حکومتی آمدن بڑھانے پر زور دیتا ہے تاہم ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کرنے سے حکومت کو 16 ماہ میں 40 ارب روپے کے اضافی اخراجات برداشت کرنا ہوں گے۔ وزارت خزانہ کے حکام کا مزید کہنا تھا کہ وفاقی سول ملازمین کی تنخواہیں بڑھانے سے قومی خزانے پر 40 ارب روپے کا اضافی بوجھ پڑے گا اور اگلے 4 ماہ میں 10 ارب جبکہ آئندہ سال تنخواہوں کا بل مزید 30 ارب بڑھ جائے گا۔ یادرہے کہ گزشتہ دنوں وفاقی دارلحکومت میں سرکاری ملازمین نے احتجاج کیا جو بعد ازاں پرتشدد ہنگاموں میں بدل گیا، اس کے بعد حکومت اور ملازمین میں مذاکرات ہوئے جن کے بعد حکومت نے ملازمین کی تنخواہیں بڑھانے کی حامی بھرلی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads. because we hate them too.