پاکستان

چیئرمین سینیٹ انتخابات میں شکست، پی ڈی ایم نے عدالت جانے کا اعلان کر دیا

جس طریقے سے گیلانی کو اکثریت کے باوجودہرایا گیا، قابل مذمت ہے، ایوان میں 6 خفیہ کیمرے لگائے گئے تھے

اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم)نے سینیٹ کے چیئرمین کے انتخاب میں یوسف رضا گیلانی کے 7 ووٹ مسترد کرنے پر عدالت جانے کا اعلان کردیا۔

تفصیلات کے مطابق اپوزیشن رہنماؤں نے پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر مشترکہ طور پر پریس کانفرنس کی جس سے بات کرتے ہوئے راجا پرویز اشرف کا کہنا تھاکہ جس طریقے سے گیلانی کو اکثریت کے باوجودہرایا گیا، قابل مذمت ہے، ایوان میں 6 خفیہ کیمرے لگائے گئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہدایت نامہ جاری کیا گیا کہ نام کے خانے کے اندر مہرلگائیں، 7 ارکان نے خانے کے اندر گیلانی کے نام پر مہرلگائی، یوسف رضا گیلانی کے7 ووٹ مسترد کرکے انہیں ہرایا گیا۔ انہوں نے دعوی کیا کہ امید ہے عدالت میں یوسف رضا گیلانی کامیاب ہوں گے۔ راجا پرویز اشرف کا کہنا تھاکہ حکومت نے ہر حربہ استعمال کرکے الیکشن چوری کیا، جو چیئرمین بٹھایا گیا ہے، اکثریت کی نفی کرکے بٹھایا گیا ہے، سنجرانی جمہوریت سے محبت کرنے والے ہوتے تو خود ہی دستبردارہوتے۔

مسلم لیگ (ن)کے جنرل سیکرٹری احسن اقبال کا کہنا تھاکہ آج پی ڈی ایم کامیاب ہوئی ہے، ہمیں 49 ووٹ ملے ہیں لیکن یوسف رضا گیلانی کو 7 ووٹ مسترد کرکے ہرایا گیا۔ احسن اقبال نے پریس کانفرنس کے دوران عدالتی فیصلے بھی پڑھے اور کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے ہیں کہ ووٹر کی نیت دیکھنی ہے، نام کے خانے میں مہر لگانے کا مطلب ہے کہ ووٹرکی نیت درست ہے، جومہر امیدوار کے خانے میں نام پر لگایاگیا وہ درست ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ اور ہائیکورٹ کے درجنوں فیصلے اور الیکشن کمیشن کی رولنگ ہے کہ خانے کے اندرڈالا گیا ووٹ درست ہے چاہے وہ نام کے اوپرکیوں نہ ہو جبکہ رولزمیں واضح لکھا گیا ہے کہ خانے میں مہرلگانا درست ہے، جس ووٹرنے امیدوارکے نام پر مہر لگائی وہ درست ہے۔ احسن اقبال کا کہنا تھا کہ 7 کے 7 ووٹوں میں امیدوار کے نام کے خانے میں مہرلگائی گئی تھی، ہم اسے چیلنج کریں گے اور عدالت سے توقع ہے اس کی درستی کرے گی۔

خیال رہے کہ چیئرمین سینیٹ کیلئے حکومتی امیدوار صادق سنجرانی کو 48 اور یوسف رضا گیلانی کو 42 ووٹ ملے جس کے بعد صادق سنجرانی چیئرمین سینیٹ منتخب ہوگئے۔ 7 ووٹرز نے یوسف رضا گیلانی کے نام کے اوپر مہر لگائی جس کی وجہ سے یہ ووٹ مسترد ہوئے۔ ایک ووٹ اس لیے مسترد ہوا کیوں کہ دونوں امیدواروں کے آگے مہر لگائی گئی تھی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button