پاکستان

شہبازشریف اورخواجہ آصف کی ضمانت نیب سےجواب طلب

لاہورہائیکورٹ نےشہبازشریف اورخواجہ آصف کی ضمانت کی درخواستوں پرنیب سےجواب طلب کرلیا

لاہورہائیکورٹ نےشہبازشریف اورخواجہ آصف کی ضمانت کی درخواستوں پرنیب سےجواب طلب کرلیا جبکہ آمدن سےزائد اثاثوں کےکیس میں کیپٹن (ر) صفدرکی عبوری ضمانت میں 15 اپریل تک توسیع کردی۔ جسٹس سردارسرفرازڈوگراورجسٹس اسجد جاوید گھرال پرمشتمل لاہورہائیکورٹ کےبنچ نےمنی لانڈرنگ کیس میں شہبازشریف کی ضمانت کی درخواست پرسماعت کی۔ عدالت نےچیئرمین اورڈی جی نیب سمیت دیگرفریقین کو 13 اپریل کیلئےنوٹس جاری کرتےہوئےآئندہ سماعت پرنیب کوتفصیلی جواب اوررپورٹ پیش کرنےکا حکم دے دیا۔

درخواستگزارکی طرف سےامجد پرویزاوراعظم نذیرتارڑایڈووکیٹ پیش ہوئے۔ درخواست میں چئیرمین اورڈی جی نیب کوفریق بناتےہوئےکہا گیا کہ نیب نےبدنیتی سےشہبازشریف کوگرفتارکرکےآمدن سےزائد اثاثوں کا کیس بنایا اوراہلخانہ کوبےنامی دار قراردیا،حمزہ شہبازاوردیگر بچوں کےخود کفیل ہونےکا ریکارڈ ریاستی اداروں کےپاس موجود ہے،حمزہ شہباز،سلمان شہبازاوردیگربچےکم عمری میں ہی خود کفیل تھے۔

شہبازشریف نےکہا کہ عوام کواپنا گھردینےکےخواب کی تکمیل کےلئےآشیانہ ہاؤسنگ اسکیم کا اجراء کیا، 5 اکتوبر 2018 کوآشیانہ کیس میں گرفتارکیا گیا،اس دوران ہی منی لانڈرنگ کی انکوائری شروع کی گئی تھی، 4 وعدہ معاف گواہوں میں سےکسی ایک گواہ نےبھی شہباز شریف کواپنےبیان میں نامزد نہیں کیا، 28 ستمبر 2020 سےگرفتارہوں،ریفرنس میں 110 گواہ ہیں اورٹرائل ابھی ابتدائی سطح پرہے،ملک سےفرارنہیں ہوں گا،کیس کا سامنا کروں گا،منی لانڈرنگ کیس میں حمزہ شہبازسمیت دیگرشریک ملزموں کوبھی ضمانت پررہا کیا جاچکا ہے، لہذا مجھےبھی منی لانڈرنگ کیس میں ضمانت پررہا کرنےکا حکم دیا جائے۔

علاوہ ازیں جسٹس سردارسرفرازڈوگراورجسٹس اسجد جاوید گھرال پرہی مشتمل لاہورہائیکورٹ کےبنچ نےمنی لانڈرنگ کیس میں لیگی رہنما خواجہ آصف کی ضمانت کی درخواست پرسماعت کی۔ عدالت نےچیئرمین اورڈی جی نیب سمیت دیگرفریقین کونوٹس جاری کرتےہوئےآئندہ سماعت پرنیب کو 14 اپریل کوتفصیلی جواب اوررپورٹ پیش کرنےکا حکم دے دیا۔

درخواست ضمانت میں چیئرمین نیب،ڈی جی نیب سمیت دیگرکوفریق بناتےہوئےموقف اختیارکیا گیا کہ نیب نےمنی لانڈرنگ اورآمدن سےزائد اثاثہ جات کےالزامات میں 29 دسمبرکواسلام آباد سےگرفتارکیا،نیب کوکیس کا ریکارڈ پہلےہی فراہم کیا جا چکا ہے،الیکشن کمیشن اورایف بی آرکے پاس بھی اثاثوں کی تمام تفصیلات موجود ہیں،نیب کو کیس میں مزید ریکوری ضرورت نہیں،بلاجوازجیل میں قید رکھا گیا ہے،منی لانڈرنگ کیس میں ضمانت پررہا کرنےکا حکم دیا جائے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button