پاکستانفیچرڈ پوسٹ

زرداری نے اداروں کی اینٹ سے اینٹ بجانے سے کیوں توبہ کر لی؟ اب وہ کس قسم کی سیاست کر رہے ہیں؟ پیپلز پارٹی کا مستقبل کیا ہوگا؟ صحافی انصار عباسی نے وجوہات بے نقاب کر دیں

آصف علی زرداری میاں صاحب کے اینٹی اسٹیبلشمنٹ بیانیہ سے پیچھے ہٹ گئے یہ کہہ کرکہ تحریک چلانی ہے تو ملک واپس آئیں

زرداری نے اداروں کی اینٹ سے اینٹ بجانے سے کیوں توبہ کر لی؟ اب وہ کس قسم کی سیاست کر رہے ہیں؟ پیپلز پارٹی کا مستقبل کیا ہوگا؟ صحافی انصار عباسی نے وجوہات بے نقاب کر دی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی انصار عباسی نے کہا ہے کہ زرداری صاحب اینٹ سے اینٹ بجانے کے بیان پر بڑی مشکل میں تھے اور وہ دن ہے اور آج کا دن بس اینٹ سے اینٹ لگانے میں لگے ہوئے ہیں۔ شاید یہی وجہ ہے کہ وہ میاں صاحب کے اینٹی اسٹیبلشمنٹ بیانیہ سے پیچھے ہٹ گئے یہ کہہ کرکہ تحریک چلانی ہے تو ملک واپس آئیں، بات ایسی غلط بھی نہیں۔ مگر زرداری صاحب تو اس حد تک آگے جاتے نظر آتے ہیں کہ اس سال ذوالفقار علی بھٹو کی برسی گڑھی خدا بخش کے بجائے راولپنڈی میں منانے کا اعلان کر دیا مگر جلسہ کورونا کے باعث ملتوی ہو گیا۔ اس بار روایت سے ہٹ کر مجلس عاملہ کا اجلاس بھی لاڑکانہ کے بجائے 15اپریل کو کراچی میں ہو گا۔ باقی باتیں تو اپنی جگہ مگر یہ اعتراض تو نہیں بنتا کہ مسلم لیگ (ن)نے ایک ایسا امیدوار دیا جو بے نظیر بھٹو کے قتل میں ملوث مبینہ ملزمان کا وکیل رہا ہے۔ حضور کم از کم یہ بات تو آپ نہ کریں۔

انصار عباسی کا مزید کہنا تھا کہ یاد نہیں بی بی نے 18 اکتوبر کے حملوں کے بعد کس کس پر شک کیا تھا اور ان کے ساتھ آپ نے کیا کیا؟ اپنی طرز سیاست میں وہ پولو کے اچھے کھلاڑی تو بن گئے، سیاسی شطرنج بازی میں بھی اپنی مثال آپ ہیں مگر جس پارٹی کو بدترین آمر ختم تو دور کی بات محدود نہ کر سکا وہ آج کہاں کھڑی ہے؟ چاروں صوبوں کی زنجیر اب سندھ تک محدود ہو گئی ہے۔ اگر یہ طرز سیاست کامیاب ہے تو واقعی وہ ایک کامیاب سیاست دان ہیں، ذرا سوچئے! وہ کہا کرتے تھے کہ میرے پاس ٹیم ہے۔ میری ٹیم نے ہر محکمے کے حوالے سے ہوم ورک کیا ہے۔یہ ٹیم تین ماہ میں پاکستان بدل دے گی۔ اقتدار ملا تو پتہ چلا کہ ٹیم ہے اور نہ تیاری لیکن پھر بھی قصور ان کا نہیں، ٹیم کا ہے۔ کسی اور نے نہیں،خود انہوں نے اسد عمر کو پوسٹر بوائے اور معاشی ٹیم کا قائد بنایا۔ اسی اسد عمر کے ایما پر انہوں نے کروڑوں گھر بنانے اور کروڑوں نوکریاں دلوانے کے غیرحقیقی وعدے کئے تھے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button