پاکستانفیچرڈ پوسٹ

بے نظیر بھٹو کا بیٹا اور نوازشریف کی بیٹی 6 ماہ بھی ایک ساتھ نہیں چل سکے، دونوں کا سیاسی مستقبل کیا ہوگا؟ سینئر صحافی حامد میر نے کڑوا سچ سب کے سامنے رکھ دیا

پیپلز پارٹی والے جنرل ضیا الحق کو نواز شریف کا سیاسی باپ اور ن لیگ والے جنرل ایوب خان کو ذوالفقار علی بھٹو کا سیاسی باپ قرار دینے لگے

بے نظیر بھٹو کا بیٹا اور نوازشریف کی بیٹی 6 ماہ بھی ایک ساتھ نہیں چل سکے، دونوں کا سیاسی مستقبل کیا ہوگا؟ سینئر صحافی حامد میر نے کڑوا سچ سب کے سامنے رکھ دیاہے۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی حامد میر کا کہناہے کہ مارچ 2021میں سینیٹ کے الیکشن میں پی ڈی ایم نے اسلام آباد سے سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کو اپنا مشترکہ امیدوار بنایا۔ گیلانی صاحب اچھی طرح جانتے تھے کہ ان کی کامیابی میں مسلم لیگ (ن)کا کردار بہت اہم تھا لیکن انہوں نے ہر قیمت پر سینیٹ میں اپوزیشن لیڈر بننے کی کوشش میں پی ڈی ایم کو توڑ دیا۔ محترمہ بینظیر بھٹو کا بیٹا اور نواز شریف کی بیٹی بمشکل چھ ماہ بھی ایک ساتھ نہ چل سکے۔ دونوں طرف سے ایک دوسرے پر سلیکٹڈ کے آوازے کسے گئے اور معاملہ یہاں تک پہنچا کہ پیپلز پارٹی والے جنرل ضیا الحق کو نواز شریف کا سیاسی باپ اور مسلم لیگ (ن)والے جنرل ایوب خان کو ذوالفقار علی بھٹو کا سیاسی باپ قرار دینے لگے۔ پی ڈی ایم کے ٹوٹنے کی کہانی بڑی دلچسپ ہے۔

چند دن پہلے یوسف رضا گیلانی نے اپنے حامی سینیٹروں کو ظہرانے پر بلایا۔ ان میں بلوچستان عوامی پارٹی (باپ)کے سینیٹر بھی شامل تھے۔ انہی میں سے ایک سینیٹر نے بڑے مزے لے کر مجھے ظہرانے میں ہونے والی باتیں سنائیں اور کہا کہ کبھی سوچا بھی نہ تھا کہ میں حکومت اور اپوزیشن دونوں کے مزے لوں گا۔ ہمارے اس سینیٹر دوست کا دن گیلانی کے ساتھ اور شام سنجرانی کے ساتھ گزرتی ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button