پاکستانفیچرڈ پوسٹ

خواتین کے لئے نامناسب الفاظ استعمال کرنے پر مقامی اخبار کے خلاف ملک بھر میں احتجاج، ایسی تحریک چلانے کااعلان کر دیا گیا کہ سب چونک کر رہ گئے

روزنامہ امت کے 5 اپریل کو شائع ہونے والے مضمون میں خواتین کے لیے استعمال کیے گئے نامناسب الفاظ کی شدید مذمت کی جارہی ہے

خواتین کے لئے نامناسب الفاظ استعمال کرنے پر مقامی اخبار کے خلاف ملک بھر میں احتجاج، ایسی تحریک چلانے کااعلان کر دیا گیا کہ سب چونک کر رہ گئے ہیں۔

تفصیلا ت کے مطابق ملک کی اہم ترین صحافتی و انسانی حقوق کی تنظیموں نے صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی سے شائع ہونے والے اردو زبان کے اخبار روزنامہ امت کے 5 اپریل کو شائع ہونے والے مضمون میں خواتین کے لیے استعمال کیے گئے نامناسب الفاظ کی شدید مذمت کی ہے۔ روزنامہ امت کو اشتعال انگیز اور صحافتی اقدار کے خلاف خبریں اور مضامین شائع کیے جانے کی وجہ سے پہلے بھی تنقید کا نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔ صحافتی تنظیموں کا دعوی ہے کہ امت سیاق و سباق سے ہٹ کر رپورٹنگ کرتا ہے، جس وجہ سے صحافتی اخلاقیات پر سوالات اٹھتے ہیں۔

حالیہ دو ہفتوں کے دوران امت کی رپورٹنگ پر صحافتی تنظیموں کے علاوہ انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیموں نے بھی تشویش کا اظہار کیا تھا اور اب اخبار کے تازہ مضمون پر ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان (ایچ آر سی پی)اور پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹ (پی ایف یو جے) سمیت دیگر تنظیموں نے مذمت کی ہے۔ ایچ آر سی پی اور پی ایف یو جے نے امت کے 5 اپریل کو مرکزی صفحے پر اہم خبر کے طور پر شائع کیے جانے والے مضمون کی مذمت کی ہے، جس میں خواتین کے خلاف انتہائی نامناسب زبان استعمال کی گئی تھی۔ اخبار کے مضمون کے انداز پر بھی صحافیوں اور صحافتی تنظیموں نے سوالات اٹھائے کہ اخبار میں شائع مضمون کسی طرح رائے، رپورٹ یا خبر کے زمرے میں نہیں آتا۔ طویل مضمون میں اگرچہ دنیا کے مختلف ممالک میں خواتین کے ریپ واقعات کو سامنے لایا گیا مگر مضمون میں مثالیں دینے کا انداز اس قدر نامناسب تھا کہ پاکستان کی نامور خواتین کے لیے بھی نامناسب زبان استعمال کی گئی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button