پاکستانفیچرڈ پوسٹ

ٹن پیک کھانوں کے استعمال سے ہماری زندگی پر کس قسم کے اثرات مرتب ہو رہے ہیں؟ ذہنی اور جسمانی حالت میں کونسی تبدیلیاں آ رہی ہیں؟ سنسنی خیز رپورٹ

گرمیوں میں ہمارا زیادہ تر وقت بے فکری سے جگنوں اور مینڈکوں کو پکڑنے میں گذرتا لیکن اگست کی آمد کے ساتھ ہی آنے والے موسم سرما کی تیاریاں زور پکڑ لیتیں

ٹن پیک کھانوں کے استعمال سے ہماری زندگی پر کس قسم کے اثرات مرتب ہو رہے ہیں؟ ذہنی اور جسمانی حالت میں کونسی تبدیلیاں آ رہی ہیں؟ سنسنی خیز رپورٹ آگئی۔

تفصیلات کے مطابق جاری ہونے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ آج کل پراسیسڈ فوڈ یا محفوظ بنائی گئی خوراک کا مفہوم بہت ہی منفی ہے۔ جب بھی پراسیسڈ فوڈ کا ذکر آئے تو ذہن میں پلاسٹک میں لپیٹے ہوئے پنیر کا خاکہ ابھرتا ہے یا صرف پانی ملائیں اور کھائیں والے کھانے ذہن میں آتے ہیں۔ کیا تمام پراسیسڈ فوڈز کو ایک ہی زاویہ نگاہ سے دیکھنا مناسب ہے؟ ہم یہ بھول جاتے ہیں کہ خوراک کو محفوظ بنانے کے طریقے میں جدت آنے کی وجہ اس کی غذائیت میں بھی بہتری آئی ہے، خوراک کا ضیاع بھی کم ہوا اور انسان کو آسائش کے لمحات بھی میسر آئے ہیں۔ صرف یہ کہہ دینا کہ تمام پراسیسڈ کھانے صحت کے لیے مضر ہیں ٹھیک نہیں ہے۔ بات اس سے زیادہ پیچیدہ ہے۔

محفوظ بنائی گئی خوراک یا پراسیسڈ فوڈ سے پہلی بار میرا سامنا کینیڈا کے دیہات میں ہوا جہاں ہم سات ایکڑ کے فارم ہاؤس میں اپنی ضرورت کی نوے فیصد خوراک اگاتے تھے۔ گرمیوں میں ہمارا زیادہ تر وقت بے فکری سے جگنوں اور مینڈکوں کو پکڑنے میں گذرتا لیکن اگست کی آمد کے ساتھ ہی آنے والے موسم سرما کی تیاریاں زور پکڑ لیتیں۔ اونٹاریو کے مرطوب موسم گرما میں تمام مچھلی سے لے کر مکئی کے ابلے ہوئے دانوں تک اپنے کھیتوں میں پیدا ہونے والی ہر چیز کو کچن میں جمع کر کے اسے ایک عمل سے گزار کر محفوظ بنایا جاتا تھا تاکہ شدید سردیوں کے موسم میں اسے استعمال کیا جا سکے۔

پراسیسڈ کھانوں نے خوراک کے ساتھ ہمارے تعلق کو بدل کر رکھ دیا ہے۔ بہت پہلے پراسیسڈ فوڈ نے انسانی ارتقا کے عمل کو بدلا اور آج ہم جس شکل میں ہیں، اس میں پراسیسڈ کھانوں کا بھی عمل دخل ہے۔ قدیم انسان ہومو ہیبیلس (Homo habilis) کے زمانے (24 لاکھ تا 14 لاکھ سال قبل)میں خوراک کو محفوظ بنانے کے ثبوت ملتے ہیں۔ اپنے ارتقائی پیشروں کے برعکس ہومو ہیبیلس کے دانت قدیم باشندوں کے دانتوں سے قدرے چھوٹے تھے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ اس کی وجہ خوراک کے انسانی منہ تک پہنچنے سے اس میں ہونے والی تبدیلیاں ہیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.