پاکستانفیچرڈ پوسٹ

صحافی لڑکیوں کو کیوں تنگ کرتے ہیں؟ لڑکیاں اپنی مرضی سے اغواء ہو کر شادی کیوں کر لیتی ہیں؟ سینئر صحافی حیران کن سچائی سامنے لے آئے

اوپر سے آنے والی ہر ہدایت پر من و عن عمل کرنے والے صحافی کسی لڑکی کو تنگ کیوں نہیں کرتے؟ کیا انھیں سیر سپاٹے کا بھی شوق نہیں؟

صحافی لڑکیوں کو کیوں تنگ کرتے ہیں؟ لڑکیاں اپنی مرضی سے اغواء ہو کر شادی کیوں کر لیتی ہیں؟ سینئر صحافی حیران کن سچائی سامنے لے آئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی وسعت اللہ خان کا کہنا ہے کہ جس طرح اس ملک میں اقلیتی گھرانوں کی کچھ لڑکیاں اپنی مرضی سے مذہب تبدیل کرکے اپنی مرضی سے اغوا ہو کر شادی کر لیتی ہیں، اقلیتی لڑکے ایسا کیوں نہیں کر پاتے؟ جو صحافی طے شدہ نظریاتی لائن سے ہٹ کر اپنی بات کرنے کی کوشش کرتے ہیں اور متنازع پالسییوں یا اقدامات پر کھل کر سوال اٹھاتے ہیں صرف وہی کسی لڑکی کو تنگ کرنے کے عوض اس کے غیرت مند بھائیوں سے کیوں پٹتے، اغوا یا قتل ہوتے ہیں یا پھر سیر سپاٹے کے لیے افغانستان و شمالی علاقہ جات میں کچھ عرصے کے لیے کیوں غائب ہو جاتے ہیں۔ ان کی لاپرواہی کا یہ عالم ہے کہ کہیں جانے سے پہلے والدین تک کو فون نہیں کرتے۔ یوں ان کے ورثا ان کی واپسی تک طرح طرح کے اداروں کے بارے میں طرح طرح کی غلط فہمیاں پالتے رہتے ہیں اور پھر ان غلط فہمیوں کو دور کرنے کا کام وزرا اور محبِ وطن صحافیوں کو کرنا پڑتا ہے۔ مگر سوچنے کا مقام ہے کہ اوپر سے آنے والی ہر ہدایت پر من و عن عمل کرنے والے صحافی کسی لڑکی کو تنگ کیوں نہیں کرتے؟ کیا انھیں سیر سپاٹے کا بھی شوق نہیں؟

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.