پاکستان

عوام سے کہتا ہوں کہ "گھبراؤ” اور کپتان کو”بھگاؤ”۔۔۔ شہباز شریف کا جلسے سے خطاب

مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے کہا ہے کہ ہمیں حکومت کا موقع ملا تو خیبر پختون خوا کو پنجاب سے آگے لے جائیں گے، بی آر ٹی پراجیکٹ ن لیگ کو ملتا تو ہزار گنا بہتر بناتے اور لاہور کی میٹرو سروس سے پہلے مکمل کرلیتے۔ 

یہ بات انہوں نے سوات میں پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ کے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر پی ڈی ایم کے دیگر رہنما بھی موجود تھے۔

شہباز شریف نے کہا کہ ملک میں بیس بیس گھنٹے بجلی کی لوڈ شیڈںگ ہوتی تھی تاہم نواز شریف نے لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کیا، 14 ہزار میگا واٹ بجلی سسٹم میں داخل کی لیکن آج ملک میں لوڈ شیڈنگ سے عوام کا برا حال ہے، عمران خان کہتے تھے سستی بجلی لاؤں گا مگر آج سستی بجلی تو دور کی بات مہنگی بجلی بھی نہیں مل رہی۔انہوں ںے کہا کہ نواز شریف کے دور حکومت میں پنجاب کے تمام اسپتالوں میں دوائیں مفت ملتی تھیں آج دوائیں بھی چھین لی گئیں، لیکن آج مریض علاج کے لیے در بدر پھررہا ہے، عمران خان کے دور میں مہنگائی آسمان پر پہنچ گئی، آج پاکستان بنانے والوں کی روحیں تڑپ رہی ہوں گی، بنی گالہ کے محل میں بیٹھے عمران نیازی کو سوات کے عوام کا کیا پتا؟مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہا کہ خیبر پختون خوا میں بھی عوام کا برا حال ہے، پشاور بی آر ٹی میں اربوں روپے کمائے گئے، نواز شریف کی قیادت میں بی آر ٹی کا پروجیکٹ بنتا تو ہزار گنا بہتر ہوتا اور ہم یہ پروجیکٹ لاہور کی میٹرو سروس سے پہلے مکمل کرلیتے، ہمیں حکومت کرنے کا موقع ملا تو خیبر پختون خوا کو پنجاب سے آگے لے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ نیا پاکستان پرانے پاکستان سے کئی سال پیچھے چلا گیا اس حکومت کا عوام نے اپنے ووٹ سے خاتمہ نہ کیا تو پاکستان کا مزید برا حال ہوجائے گا، مہنگائی اور کرپشن کے خلاف انقلاب آنا چاہیے، وزیراعظم کہتے ہیں گھبرانا نہیں لیکن میں عوام سے کہتا ہوں کہ ’’گھبراؤ اور اس کو بھگاؤ‘‘، اگر اپنی تقدیر بنانی ہے تو عمران نیازی کو مزید تقدیر سے کھیلنے نہیں دینا۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ عمران خان کے امریکا مخالف بیانات محض ڈرامہ ہیں تم امریکا کو ایئر اسپیس دے چکے ہو عوام سے جھوٹ کیوں بولتے ہو؟سوات میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عمران خان کی حکومت بنانے سے قبل اور بعد میں بھی کوئی اہمیت نہیں، سلامتی کونسل کے اجلاس میں وزیراعظم کے نہ آنے سے بخوبی اندازہ ہوجاتا ہے کہ عمران خان کی کوئی اہمیت نہیں، عمران خان پاکستانی سیاست کا غیر ضروری حصہ ہیں، عمران خان آزمائے ہوئے اور چلے ہوئے کارتوس ہیں جنہیں بندوق میں دوبارہ رکھا جارہا ہے۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ عمران خان امریکا اور جنرل مشرف کے خلاف بات کررہے ہیں، کہتے ہیں کہ مشرف کے فیصلے غلط تھے تو جب مشرف فیصلے کررہا تھا تو تم نے اس وقت اختلاف کیوں نہیں کیا؟ تم ہی اس وقت مشرف کے سب سے بڑے سپاہی تھے، عمران خان نے ریفرنڈم میں مشرف کا ساتھ دیا اور کہا کہ ملک کے پاس مشرف کے سوا کوئی آپشن موجود نہیں، امریکا کہتا تھا کہ مشرف ہمیں لوگ مہیا کرتا ہے تو تم مشرف کے شانہ بشانہ کھڑے تھے۔

سربراہ جے یو آئی (ف) نے کہا کہ ہم سب جانتے ہیں تم امریکا کے نمائندے ہو اور برطانیہ میں تمہارے جائز اور ناجائز اثاثے موجود ہیں، امریکا مخالف بیانات محض ایک ڈرامہ ہیں ، تم امریکا کو ایئر اسپیس دے چکے ہو عوام سے جھوٹ کیوں بولتے ہو؟

انہوں نے کہا کہ امریکا کی دوستی کا ایک معیار ہے اور اس معیار پر وہی پورا اترتا ہے جو سی پیک کو متنازع بنائے، آپ نے سی پیک کو متنازع بناکر ملکی معیشت کو داؤ پر لگادیا، چین جیسے گہرے دوست کو ناراض کیا جس کی وجہ سے چین آج پاکستان کے بجائے ایران سے معاہدے کررہا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.