پاکستان

رواں سال آبی ذخائر میں تخمینے سے کتنے فیصد پانی کم آیا؟ چیئرمین ارسا نے سچ سے پردہ اٹھا دیا

سندھ ایک طرف نئے ڈیموں کی مخالفت کرتا ہے دوسری طرف اضافی پانی کا مطالبہ کرتا ہے، اس سال آبی ذخائر میں تخمینے سے 62 فیصد کم پانی آیا

رواں سال آبی ذخائر میں تخمینے سے کتنے فیصد پانی کم آیا؟ چیئرمین ارسا نے سچ سے پردہ اٹھا دیا‘ ارسا کے مطابق رواں سال آبی ذخائر میں تخمینے سے 62 فیصد کم پانی آیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل کا اجلاس نواب یوسف تالپور کی زیر صدارت اسلام آباد میں ہواجس میں چیئرمین ارسا را ارشاد علی خان نے کہاکہ سندھ ایک طرف نئے ڈیموں کی مخالفت کرتا ہے دوسری طرف اضافی پانی کا مطالبہ بھی کرتا ہے، اس سال آبی ذخائر میں تخمینے سے 62 فیصد کم پانی آیا، کمیٹی کو بتایا گیا کہ خریف سیزن میں پانی کی 17فیصد کمی کا سامناہے۔ سندھ سے ارسا کے رکن نے اعدادوشمار پر اعتراض اٹھا دیا اور کہا کہ کوٹیکا اضافی 5 ہزار کیوسک پانی نہیں دیا جارہا۔ چیئرمین ارسا نے کہا کہ جتنا پانی دستیاب ہوتا ہے ارسا ریکارڈ کے مطابق ہی تقسیم ہوتا ہے،ڈیم نہ بنانے کی وجہ سالانہ 14ارب ڈالر کا پانی سمندر میں جاتا ہے، دیامر بھاشا سمیت کالاباغ اور اکھوڑی تین ڈیم بنائیں گے تو پانی کا مسئلہ حل ہوگا۔

وزیر آبپاشی پنجاب محسن لغاری نے کہا کہ پانی کے معاملے کو سیاسی رنگ نہ دیا جائے، یہ معاملہ مشترکہ مفادات کونسل کے پاس ہے اور مشترکہ مفادات کونسل اس معاملے کے حل کے لیے اٹارنی جنرل کو کہہ چکی ہے۔ اجلاس میں اٹارنی جنرل آفس کی نمائندہ نے بتایا کہ پانی کا معاملہ تکنیکی سے زیادہ سیاسی ہے اس معاملے کو مشترکہ مفادات کونسل کے فورم پر حل کیا جائے۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ آئندہ اجلاس میں اٹارنی جنرل آکر ارسا ریکارڈ کے تحت صوبوں میں پانی کی تقسیم کے مسئلے کے حل پر بریفنگ دیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.