پاکستانفیچرڈ پوسٹ

لاہور ہائیکورٹ نے خواجہ آصف کی ضمانت پر رہائی کا تفصیلی فیصلہ جاری کر دیا، فیصلہ میں کیا تحریر کیا گیا؟ تفصیلات منظر عام پر آگئیں

فیصلے میں قراردیا گیا کہ نیب تسلیم کرتا ہے کہ خواجہ آصف پر کک بیکس لینے اور نہ ہی ان پرکرپشن اور اختیارات کے ناجائز استعمال کا الزام ہے

لاہور ہائیکورٹ نے خواجہ آصف کی ضمانت پر رہائی کا تفصیلی فیصلہ جاری کر دیا، فیصلہ میں کیا تحریر کیا گیا؟ تفصیلات منظر عام پر آگئی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کی جسٹس عالیہ نیلم اور جسٹس شہباز رضوی پرمشتمل بینچ نے خواجہ محمد آصف کی ضمانت پر رہائی کی درخواست کا تحریری فیصلہ جاری کیا۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ نیب تسلیم کرتا ہے کہ خواجہ آصف پر کک بیکس لینے کا الزام نہیں، نہ ہی ان پرکرپشن اور اختیارات کے ناجائز استعمال کا الزام ہے۔

فیصلے میں مزید لکھا گیا کہ ایمیکوکمپنی کا نمائندہ پاکستان آنا چاہتا تھا مگر تفتیشی افسر نے دبئی کی کمپنی کے نمائندے کو شامل تفتیش نہیں کیا، نیب تفتیشی نے خواجہ آصف کی2004ء سے 2008ء کی بیرون ملک سے آنیوالی رقم کی سفارت خانے سے تصدیق بھی نہیں کروائی۔ عدالت نے قرار دیاکہ پراسیکیوشن نے کیس ابھی ٹرائل کورٹ میں ثابت کرنا ہے جبکہ ریفرنس بھی ابھی دائر نہیں ہوا،اس لیے عدالت خواجہ آصف کی ضمانت منظور کرتی ہے۔

ہائیکورٹ نے قرار دیاکہ نیب نے ایک رپورٹ 28 اپریل کو پیش کی جس میں الزام لگایا گیاکہ خواجہ آصف کے1987سے2018ء کی مدت میں 23کروڑ روپے کے اثاثے آمدن سے مطابقت نہیں رکھتے۔ فیصلے میں تحریر کیا گیا ہے کہ نیب نے دوسری رپورٹ18 جون کو دی جس میں 1990سے2016کے دوران خواجہ آصف کے آمدن سے زائد اثاثہ جات کی مالیت15کروڑ 80 لاکھ روپے بتائی گئی، پہلی رپورٹ کا دورانیہ 31 اوردوسری کا 26 سال ہے، نیب نے اس کی کوئی وجہ نہیں لکھی، نہ ہی نیب پراسیکیوٹر اس نکتے پر عدالت کو مطمئن کر سکے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.