پاکستانفیچرڈ پوسٹ

بن لادن کمپنی،پاکستانی ملازمین کو ان کےواجبات کون ادا کرے گا؟

بن لادن کمپنی سے نکالے جانے والے پاکستانی ملازمین کو ان کےواجبات کون ادا کرے گا؟تشویشناک حقیقت سے پردہ اُٹھ گیا

بن لادن کمپنی سے نکالے جانے والے پاکستانی ملازمین کو ان کےواجبات کون ادا کرے گا؟تشویشناک حقیقت سے پردہ اُٹھ گیا،تفصیلات کے مطابق گیارہ ستمبر 2015 کو یہ ایک جمعے کی شام تھی۔ سعودی عرب میں مسلمانوں کے عظیم مذہبی اجتماع حج میں کچھ ہی روز رہ گئے تھے۔ مکہ میں مسجد الحرام کے اندر خانہ کعبہ اور اس کے گرد و نواح میں زائرین کی بہت بھیڑ تھی۔

اس روز مکہ میں غیر معمولی طور پر بہت تیز بارش ہوئی اور تند و تیز ہوا چلنے لگی۔ اربوں ڈالر کے عوض حرم کی توسیع میں مصروف تعمیراتی کمپنی بِن لادن کا کام معمول کے مطابق جاری تھا۔ مسجد الحرام کے کلاک ٹاور پر پانچ بج کر 23 منٹ ہوئے تو بادل گرجنے جیسی آواز آئی اور کچھ دیر میں معلوم ہوا کہ کمپنی کی ایک کرین ہوا میں لہرانے کے بعد نیچے گِر گئی ہے۔

وہ کرین مسجد الحرام کے احاطے میں صفہ مروہ کے اس حصے میں نصب تھی جو چھوٹی کرینوں کی سپلائی کو بحال رکھتی تھی اور حرمِ مکہ کے نصف حصے پر پھیلی ہوتی تھی۔ اس حادثے میں لاتعداد زائرین زخمی ہوئے اور 100 سے زیادہ جانوں کا نقصان ہوا۔ حادثے کے بعد کمپنی کا کام روک دیا گیا اور اس کے خلاف تحقیقات بھی ہوئیں اور پھر نتیجہ بھی سامنے آیا۔ لیکن ایک اور مسئلہ کمپنی کے ’دیوالیہ‘ ہو جانے کا تھا جس سے پاکستان سمیت کئی ملکوں سے آئے مزدوروں کی تنخواہیں واجب الا ادا ہوگئیں۔

سنہ 2020 میں پاکستانی مزدوروں کے لیے بن لادن کے بقایا جات کی خبر کے ایک سال بعد اب ایک بار پھر سعودی عرب میں پاکستانی سفارتخانے نے اپنے ایک پیغام میں اعلان کیا کہ بن لادن کمپنی نے 342 پاکستانیوں کے واجب الادا بقایا جات سفارت خانہ پاکستان کو فراہم کر دیے ہیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.