پاکستانفیچرڈ پوسٹ

نور مقدم کیس کی ایک اور نئی کہانی کھل گئی، ملزم ظاہر جعفر کو واردات سے قبل امریکا جانے سے کس نے روکا؟ ڈاکٹر شاہد مسعود نے سنسنی خیز انکشاف کر ڈالا

ائیرپورٹ پر اس کے ہمراہ نور مقدم بھی تھی جو اسے روکنے کی کوشش کر رہی تھی کہ تم نہ جاؤ، نور مقدم ننگے پاؤں ٹیکسی میں بیٹھی ہوئی تھی

نور مقدم کیس کی ایک اور نئی کہانی کھل گئی، ملزم ظاہر جعفر کو واردات سے قبل امریکا جانے سے کس نے روکا؟ ڈاکٹر شاہد مسعود نے سنسنی خیز انکشاف کر ڈالا۔

تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی و تجریہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ ائیرپورٹ پر اس کے ہمراہ نور مقدم بھی تھی جو اسے روکنے کی کوشش کر رہی تھی کہ تم نہ جاؤ۔ انہوں نے کہا کہ نور مقدم ننگے پاؤں ٹیکسی میں بیٹھی ہوئی تھی، نور مقدم کے منع کرنے پر ظاہر جعفر نے امریکہ جانے کا ارادہ ترک کر دیا اور کہا کہ میں نے نہیں جا رہا جس پر دونوں واپس آ گئے۔ واپس آنے پر ہی ظاہر جعفر نے لڑکی پر تشدد کیا، اسے قتل کیا اور پھر اس کا سر قلم کر دیا۔ ایک اور عجیب بات یہ کہ قتل کے دوران ظاہر جعفر اپنے گھر والوں سے بات کرتا رہا تھا، جب سر قلم ہو چکا تھا تو اس دوران اور اس کے بعد بھی ملزم کی اپنے والدین سے بات ہوتی رہی، اس کے بعد اسے نے کوشش کی کہ میں اگلی ہی فلائٹ سے امریکہ چلا جاؤں لیکن اس کو گرفتار کر لیا گیا تھا۔

ڈاکٹر شاہد مسعود کا مزید کہنا تھا کہ ملزم کی عمر28 سال ہے اور اس کا تعلق ایک انتہائی معتبر گھرانے سے ہے، اس لڑکے کا خاندان امیر ہے، ان کے خاندان کی خدمات تحریک پاکستان تک جاتی ہیں۔ اس قتل میں ایک نئی کہانی سامنے آئی ہے کہ ظاہر جعفر امریکہ جا رہا تھا، ظاہر جعفر نے قتل کرنے کے بعد تو غالبا بھاگنے کی کوشش کی ہے لیکن قتل سے پہلے بھی 19 جولائی کو ظاہر جعفر امریکہ جا رہا تھا، ظاہر جعفر نے 19 تاریخ کو ایک ٹیکسی بک کروائی، رات کی فلائٹ سے ظاہر جعفر نے امریکہ جانا تھا۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.