پاکستانفیچرڈ پوسٹ

بلوچستان میں زلزلہ، پاکستان کے کون سے علاقے زلزلے کے زیادہ خطرے کی زد میں ہیں؟ سب کو حیران کر دینے والی تفصیلات منظر عام پر آگئی ہیں

صوبہ بلوچستان کے ضلع ہرنائی کے 60 سالہ رہائشی حسین بخش کا جن کا گھر جمعرات کی صبح آنے والے 5.9 شدت کے زلزلے میں متاثر ہوا ہے

بلوچستان میں زلزلہ، پاکستان کے کون سے علاقے زلزلے کے زیادہ خطرے کی زد میں ہیں؟ سب کو حیران کر دینے والی تفصیلات منظر عام پر آگئی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ‘زلزلوں نے تو ہمارا گھر ہی دیکھ لیا ہے۔ تقریبا 25 سال قبل بھی زلزلے میں میرا گھر تباہ ہوا تھا جس میں ہم نے اپنے گھر کے دو افراد کو کھو دیا تھا۔ اب بھی ہمارے گھر کو نقصان پہنچا ہے جس میں کوئی ہلاک تو نہیں ہوا مگر گھر کے تقریبا سب افراد ہی زخمی ہوئے ہیں۔’ یہ کہنا تھا صوبہ بلوچستان کے ضلع ہرنائی کے 60 سالہ رہائشی حسین بخش کا جن کا گھر جمعرات کی صبح آنے والے 5.9 شدت کے زلزلے میں متاثر ہوا ہے۔ پاکستان میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے پی ایم ڈی اے کے مطابق بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب صوبہ بلوچستان کے مختلف علاقوں میں زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے تھے۔ اس زلزلے کا مرکز ضلع ہرنائی کے قریب بتایا جا رہا ہے۔ اب تک کی اطلاعات کے مطابق سب سے زیادہ نقصاں بھی ضلع ہرنائی میں ہوا ہے جہاں پر سو سے زائد کچے مکانات کے مہندم ہونے کی اطلاعات ہیں اور انتظامیہ کے مطابق کم از کم بیس لوگ ہلاک ہو چکے ہیں۔ حسین بخش کا کہنا تھا کہ رات کے ساڑھے تین سے چار بجے کا وقت تھا جب انھوں نے زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے۔ ‘میں نے شور مچایا کہ سب گھر سے باہر نکلو اور خود بچوں کو اٹھانے کے لیے دوڑا۔ چند ہی سیکنڈ میں گھر کے سب لوگ دروازے کی طرف دوڑ رہے تھے۔ اس دوران ہماری چھت سے لکڑی کے ستون گرنا شروع ہو گئے جن کے لگنے سے مجھے معمولی چوٹ آئی جبکہ میرا ایک بیٹا اور بہو زیادہ زخمی ہوئے ہیں۔

یاد رہے کہ ہرنائی میں اس سے قبل سنہ 1997 میں ریکٹر سکیل پر سات کی شدت کا زلزلہ آیا تھا۔ جس میں سو سے زیادہ لوگ ہلاک ہوئے تھے۔ زلزلہ پیما مرکز اسلام آباد کے ڈائریکٹر زاہد رفیع کے مطابق ہرنائی اور بلوچستان پہلے بھی زلزلوں کی زد میں رہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ایسا نہیں ہے کہ ان علاقوں میں زلزلے کی توقع نہیں تھے۔ یہ علاقے فالٹ لائن پر ہیں۔ ان میں زلزلے کا آنا کوئی غیر معمولی بات نہیں ہے۔ زاہد رفیع کے مطابق بلوچستان کے حالیہ زلزلے کا سبب بھی ہرنائی فالٹ لائن ہے اور اس زلزلے کے جھٹکے کوئٹہ تک محسوس ہوئے ہیں۔ زیر زمین فالٹ لائن جب حرکت کرتی ہے تو وہ زلزلے کا سبب بنتی ہے۔

جیولوجیکل سروے آف پاکستان کوئٹہ کے ڈائریکٹر ڈاکٹر انور علی زئی کے مطابق یہ فالٹ لائن نالو رینج فالٹ کا حصہ ہے جو کراچی کے جنوب سے شروع ہوتے ہوئے افغانستان اور عراق سے بھی جا ملتی ہے۔ ڈاکٹر انور علی زئی کے مطابق حالیہ زلزلہ سٹرائیک سلپ کی وجہ سے آیا ہے۔ زلزلے کی فالٹ لائنز مختلف نوعیت کی ہوتی ہیں جن میں سے سٹرائیک سلپ ایک قسم ہے، جس میں زمین کے دو حصے اپنی جگہ سے الٹی سمت میں حرکت کرتے ہیں۔ ایک اور قسم نارمل فالٹ میں زیر زمین فالٹ لائن نیچے کی جانب سے گزرتی ہے جبکہ ریورس فالٹ میں فالٹ پلیٹیں اوپر کی جانب بڑھتی ہیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.