پاکستان

نوازشریف کا خطاب روکنےکی کوشش؟نیا کٹا کھل گیا

عاصمہ جہانگیرکانفرنس کےمنتظمین نےنوازشریف کی تقریرکےدوران انٹرنیٹ کنکشن منقطع کرنےکوآزادی اظاہررائےپرحملہ قراردیا

نوازشریف کا خطاب روکنےکی کوشش؟نیا کٹا کھل گیا،عاصمہ جہانگیرکانفرنس کےمنتظمین نےمسلم لیگ(ن) کےقائد نوازشریف کی تقریرکےدوران انٹرنیٹ کنکشن منقطع کرنےکی تصدیق کرتے ہوئےاسےآزادی اظاہررائےپرحملہ قراردیا ہے۔ لاہورمیں منعقدہ عاصمہ جہانگیرکانفرنس کےدوران نوازشریف نےویڈیولنک کےذریعےاپنی تقریرکا آغازکیا ہی تھا کہ اس دوران انٹرنیٹ سروسزمنقطع ہونےکےسبب کچھ ہی دیربعد ان کےخطاب کا سلسلہ اچانک منقطع ہوگیا۔ عاصمہ جہانگیرکی بیٹی اورمنتظمین میں سےایک منیزے جہانگیرنےتصدیق کی کہ نوازشریف کا خطاب شروع ہونےکےفوراً بعد براڈ بینڈ انٹرنیٹ سروسزاورموبائل انٹرنیٹ معطل کردیا گیا تھا۔

تقریب کےبعد جاری ہونےوالےبیان میں منتظمین نےنوازشریف کی تقریرکومبینہ طورپرروکنےکےلیےریاست کی جانب سےاختیارکیےگئے رویےپرافسوس کا اظہارکیا۔ بیان میں کہا گیا ہےکہ لاہورکےآواری ہوٹل میں میں منعقدہ تقریب میں انٹرنیٹ سروس فراہم کرنے والوں کو کانفرنس کےاختتام سےدوگھنٹےقبل اورنوازشریف کی تقریرکےآغازسےچند لمحےقبل انٹرنیٹ سروسزکی فراہمی سےروک دیا گیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ عاصمہ جہانگیرکانفرنس 2021 کےمنتظمین کےاس عمل کی شدید مذمت کرتےہیں اوراسےاظہاررائےکی آزادی پرحملہ سمجھتے ہیں۔

اپنے خطاب کےدوران نوازشریف نےبھی تقریرروکنےکےلیےاپنائےگئےہتھکندوں کا حوالہ دیا تھا۔ نوازشریف کا کہنا تھا اگرسوالات کرنے والوں کی زبان کھینچ لی جائےگی تواس سےملک کے مسئلےحل نہیں ہوں گے،آج بھی تاریں وغیرہ کاٹ کرزبان کھینچنےکی کوشش کی گئی ہے اورکیا سوال کرنےوالوں کواٹھا لینےاورغائب کرنےسےسوالات ختم ہوجائیں گے۔ جب ان الزامات پرتبصرہ کرنےکےلیےوفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری سےرابطہ کیا گیا توانہوں نےکہا کہ انہیں حکام کےایسےکسی اقدام کا علم نہیں ہے۔

اس سلسلےمیں پنجاب حکومت کےترجمان سےبھی رابطہ کرنےکی کوشش کی گئی لیکن انہوں نےتبصرے کی درخواست کا جواب نہیں دیا۔ ویڈیوکال منقطع ہونےکےبعد منتظمین نےنوازشریف کےٹیلی فونک خطاب کا انتظام کیا۔ منیزے جہانگیرنےاس سلسلےمیں اپنےبیان میں کہا کہ ہم آزادی اظہاررائےپریقین رکھتےہیں اسی لیےیہ غیرجانبدارپلیٹ فارم ہرایک کےلیےکھلا ہے اورہم اس اختتامی سیشن کی ہنگامہ آرائی کی مذمت کرتےہیں جہاں میاں نوازشریف خطاب کرنے والے تھے۔

 

متعلقہ خبریں

Back to top button

Adblock Detected

We Noticed You are using Ad blocker :( Please Support us By Disabling Ad blocker for this Domain. We don't show any popups or poor Ads.